پیر , 13 جولائی 2020

امریکہ اور صہیونی کا مقابلہ کرنا پارلیمنٹ کے بنیادی اصولوں میں سے ایک ہے: ایرانی اسپیکر

تہران: ایران کے نئے اسپیکر نے اسلامی انقلاب کی تہذیب سازی کی پوزیشن میں گیارہویں پارلیمنٹ کے اہم کردار کا حوالہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ امریکہ اور صہیونی کا مقابلہ کرنا پارلیمنٹ کے بنیادی اصولوں میں سے ایک ہے۔یہ بات محمد باقر قالیباف نے اتوار کے روز بطور چیئرمین اپنی پہلی تقریر میں پارلیمنٹ کے اجلاس میں کہی۔

انہوں نے اسلامی انقلاب کی تہذیب سازی کی پوزیشن میں گیارہویں پارلیمنٹ کے اہم کردار کا ذکر کرتےہوئے بتایا کہ پارلیمنٹ اسلامی انقلاب کے ارمانوں کے بارے میں کسی بھی غفلت کو قبول نہیں کرتی ہے اور غیر ملکی دشمن خاص طور پر امریکہ اور صہیونی ریاست کے ساتھ مقابلے کو اپنے بنیادی اصولوں میں سے ایک سمجھتی ہے۔

قالیباف نے کہا کہ گیارہویں حکومت شہید سلیمانی کی راہ کو جاری رکھنے کے لئے پرعزم ہے اور فلسطینی عوام ، لبنانی حزب اللہ ، مزاحمتی گروپوں ، حماس ، اسلامی جہاد اور یمن کے مظلوم عوام کی حمایت کے ساتھ ساتھ عراقی حکومت اور قوم کے ساتھ شانہ بہ شانہ کھڑے رہے گی۔

انہوں نے پارلیمنٹ کی خارجہ پالیسی کی حکمت عملی کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ گیارہویں پارلیمنٹ سامراج کے ساتھ مقابلے کو اہم سمجھتی ہے، اور امریکہ جو عالمی سامراج کا محور ہے، کے ساتھ مذاکرات اور سمجھوتہ کو بےہودہ اور نقصان دہ سمجھتی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ دہشت گرد امریکہ سے نمٹنے کے لئے ہماری حکمت عملی شہید سلیمانی کے خون کا بدلہ لینے کا سلسلہ مکمل کرنا ہے۔ وہ کام جو عین الاسد کے اڈے پر حملے کے ساتھ شروع ہوا اور خطے سے امریکی دہشت گردوں  کے انخلا کے ساتھ خاتمہ کیا جائے گا۔ایرانی اسپیکر نے گیارہویں حکومت عالمی برادری کے ساتھ باہمی تعاون بڑھانے کا خواہاں ہے۔

یہ بھی دیکھیں

امریکی بحری بیڑے میں دھماکہ

عالمی ذرائع ابلاغ نے اتوار کے روز امریکہ کے ایک جنگی بحری بیڑے میں دھماکے …