اتوار , 1 نومبر 2020

دنيا کو حقيقی خطرہ ايران سے نہيں ترکی سے ہے؛ امریکی سفیر

اسلام آباد:امريکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ڈگلس مک گريگر کو جرمنی کے ليے نيا سفير نامزد کيا ہے۔ مک گريگر ريٹائرڈ فوجی کرنل ہيں اور مشرق وسطی ميں امريکی آپريشنز کے بڑے ناقد مانے جاتے ہيں۔ وائٹ ہاؤس کی جانب سے پير ستائيس جولائی کو ايک پريس ريليز ميں ڈگلس مک گريگر کی جرمنی کے ليے نئے سفير کے طور پر نامزدگی کی تصديق کی گئی۔ابلاغ نیوز نے عالمی ذرائع ابلاغ کے حوالے سے بتایا ہے کہ مک گريگر عسکری فورس تشکيل دينے اور حکمت عملی بنانے کے ماہر ہيں۔يہ امر اہم ہے کہ مک گريگر کی ابھی سينيٹ سے منظوری باقی ہے، جہاں ٹرمپ کی ری پبلکن جماعت اکثريت کی حامل ہے۔

ڈگلس مک گريگر فوکس نيوز پر تبصرہ نگار ہيں۔ انہوں نے جرمنی کی عسکری تاريخ پر کتاب بھی لکھ رکھی ہے۔ وائٹ ہاؤس کے بيان ميں کہا گيا ہے کہ ‘وہ قومی سلامتی کے معاملات پر اکثر ريڈيو اور ٹيلی وژن پر اپنے تجزيے ديتے رہتے ہيں اور فوجی امور پر ان کی تحريريں نہ صرف امريکی بری فوج کی تشکيل نو بلکہ نيٹو اور اسرائيلی افواج و عسکری معاملات ميں جدت کا باعث بنيں۔

ڈگلس مکگريگر عراق ميں امريکی جنگ کے سخت ناقد رہے ہيں۔ علاوہ ازيں وہ مشرق وسطی ميں مداخلت پر بھی تنقيد کرتے آئے ہيں۔ فوکس نيوز پر ايک پروگرام ميں مک گريگر اکثر شام سے امريکی افواج کے انخلاء کے فيصلے کا دفاع کرتے آئے ہيں۔

ڈگلس مک گريگر سن 1976 سے سن 2004 تک امريکی فوج ميں خدمات سر انجام دے چکے ہيں۔ وہ يہ بھی کہتے آئے ہيں کہ امريکا کا شام اور عراق ميں مداخلت کا کوئی جواز نہيں بنتا اور يہ کہ دنیا کو حقيقی خطرہ ايران سے نہيں ترکی سے ہے۔ جرمنی کے ليے نامزد امريکی سفير نے ڈاکٹريٹ کی ڈگری حاصل کر رکھی ہے اور وہ مشرقی جرمنی کے سابقہ سوويت يونين کے ساتھ رابطوں پر تعليم حاصل کر چکے ہيں۔

یہ بھی دیکھیں

سعودی عرب اور عرب امارات اسرائیل کی نیابتی جنگ کر رہے ہیں: انصاراللہ

صنعا: یمن کی عوامی تحریک انصاراللہ نے کہا ہے کہ سعودی عرب اور متحدہ عرب …