جمعرات , 24 ستمبر 2020

اقوام متحدہ کے خصوصی نمائندے برائے عراق کی حضرت آیت اللہ سید علی سیستانی سے ملاقات

نجف: حضرت آیت اللہ سید علی سیستانی کے دفتر کی جانب سے جاری کردہ بیان میں‌ بتایا گیا ہے کہ عراق کے لیے اقوام متحدہ کے خصوصی نمائندے ہینس پلیشرٹ نے حضرت آیت اللہ علی سیستانی سے ملاقات کی جس میں‌بہت سارے اہم معاملات پر تبادلہ خیال کیا گیا۔

ان معاملات میں‌اول، پارلیمانی انتخابات کے بارے میں‌بات ہوئی جو کہ اگلے سال معنقد ہونے ہیں‌ اور ان کو شفاف بنانے کے لیے ضروری اقدامات پر بات چیت کی گئی۔ اس بات پر بھی غور کیا گیا کہ ان انتخابات میں‌زیادہ سے زیادہ لوگوں‌کی شرکت کو یقینی بنایا جائے اس مقصد کے لیے کسی بھی سیاسی وابستگی اور ذاتی مفادات کو بالائے طاق رکھ کر لائحہ عمل طے کیا جائے گا۔ پس یہ طے پایا کہ اقوام متحدہ کے بورڈ میں‌ متعلقہ محکمہ جات کے ساتھ مل کر شفافیت اور مانیٹرنگ کے عمل پر خصوصی توجہ دی جائے۔

اس تمام کام کا مقصد جلد الیکشن کا انعقاد نہیں‌ہے تاہم ملک میں‌صحت، معیشت، سیاست اور دیگر بحرانوں‌سے ملک کو نکالنے کے لیے یہ واحد پر امن ذریعہ ہے اس لیے شہریوں‌کے لیے یہ ضروری ہے کہ وہ اپنے سیاسی پسند کے پیش نظر کسی بھی دباؤ کے بغیر اس ملک کی سیاسی قیادت کا انتخاب کریں اور منتخب نمائندے موجودہ مسائل کے حل کے لیے عملی اقدامات کریں۔

انتخابات میں‌مزید دیر یا ضروری تیاری اور شرائط کے بغیر انتخابات کا انعقاد شہریوں‌کے لیے ہرگز قابل قبول نہ ہوگا اور یہ ملک کے مسائل میں‌اضافے کا سبب بنے گا اور اللہ نہ کرے یہ ملک میں‌قائم اتحاد کی فضا کو بھی پارہ پارہ کر سکتا ہے جس کے نتیجے میں سیاسی جماعتوں‌اور عوامی نمائندوں‌کو ‌سوائے پچھتاوے کے کچھ حاصل نہیں‌ہوگا۔

دوسری چیز، موجودہ حکومت سے مطالبہ کیا گیا کہ وہ سماجی انصاف بشمول بارڈر کراسنگ اور سیکورٹی فورسز کی کارکردگی میں‌بہتری جیسے اقدامات میں‌بہتری لائے ۔ اس کے ساتھ ساتھ حکومت اپنی اتھارٹی کو استعمال کرتے ہوئے غیر قانونی اسلحہ ضبط کرے اور مسلح قوتوں‌کے مخصوص گروہوں کے زیر اثر علاقوں کو تقسیم کے عمل سے بچائیں۔

حکومت سے یہ مطالبہ بھی کیا گیا کہ وہ بدعنوانی کو روکنے کے لیے سنجیدہ اور غیرروایتی اقدامات کرے اور اس معاملے میں‌تمام کیسز کو دوبارہ کھولا جائے تاکہ کہ بدعنوان عناصر کو قرار واقعی سزا دی جاسکے اور ان سے ملک کی لوٹی ہوئی متاع واپس لی جاسکے۔

حکومت پر زوردیا گیا کہ وہ گزشتہ برس عوامی تحریک کے آغاز شے اب تک ایسے لوگ جنہوں‌نے مجرمانہ افعال جیسا کہ مظاہرین ، سیکورٹی فورسز اور معصوم شہریوں‌کے خلاف قتل ، تشدید، عوامی مال کی لوٹ ار اور اغوا جیسے مجرمانہ افعال سرانجام دیے ان کی شناخت کرے اور ان کو گرفتار کر کے قانون کے مطابق سزا دے۔

ایسے مجرمانہ سرگرمیوں‌کو دوبارہ سرزد ہونے سے روکنے کے لیے یہ ضروری ہے کہ اس طرح‌کے قبیح افعال سرانجام دینے والوں‌کو قانون کے کٹہرے میں‌لایا جائے اور اس ضمن میں‌انصاف کا مطالبہ پورا کیا جائے۔

تیسرا اہم نکتہ،قومی خودمختاری کا تحفظ ، اس کی خلاف ورزی کی روک تھام اور ملک کے اندوونی معاملات میں‌ بیرونی مداخلت کے خلاف اٹھ کھڑے ہونا عوامی ذمہ داری ہے اور مقصد کے لیے بحیثت قوم یکجا ہونے کی ضرورت ہے۔ ذاتی اختلافات اور ذاتی فوائد کی موجودگی میں‌اس مقصد کا حصول یقینا ناممکن ہے۔ اس لیے مختلف پارٹیوں‌کو چاہیے کہ وہ ملک کی خومختاری، استحکام اور سیاسی فیصلوں‌کی آزادی کے لیے یکجا ہو کر کام کریں۔

یہ بھی دیکھیں

عبدالمجید اچکزئی کی بریت کا فیصلہ بلوچستان ہائی کورٹ میں چیلنج

کوئٹہ: محکمہ پولیس بلوچستان نے عبدالمجید اچکزئی کی بریت کے فیصلہ کو بلوچستان ہائی کورٹ …