منگل , 13 اپریل 2021

غفورحیدری وزیر اعلیٰ بننے کے لیے بریگیڈئیر خالد کے پاس گئے

اسلام آباد  : نجی ٹی وی چینل کے پروگرام میں بات کرتے ہوئے جمیعت علمائے اسلام ف کے رہنما حافظ حسین نے نیا پنڈوراباکس کھول دیا۔ تفصیلات کے مطابق حافظ حسین نے الزام عائد کیا کہ سینیٹر عبد الغفور حیدری وزیر اعلیٰ بلوچستان بننے کے لیے بریگیڈئیر خالد کے پاس گئے تھے ۔ مولانا فضل الرحمٰن پر الزامات ہیں تو نیب کے پاس جا کر جواب دیں اور منی ٹریل ثابت کریں۔
پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ پہلے یہ منت سماجت کے لیے جاتے تھے ، اب یہ نیب کی وجہ سے جارہے ہیں۔،اگر ان پر کوئی الزام ہے جو نیب کو جواب دیں اور اپنی صفائی پیش کریں۔ ہمار ے چار ساتھیوں کو جے یو آئی (ف) سے ڈکٹیٹر شپ کے ذریعے نکالنے کی بات کی گئی ۔ جہاں تک پیپلز پارٹی ، ن لیگ اور دیگر جماعتوں کا تعلق ہے تو جمہوریت،ووٹ کو عزت دو،کسی کو مداخلت نہیں کرنی چاہئیے، شفاف الیکشن ہونے چاہئیں کی باتیں تو صرف اقتدار کے لیے ہیں ۔
خود کواقتدار ملے تو چاہے جنرل گیلانی، جنرل ضیا کے ذریعے ملے وہ ٹھیک ہے ۔ انہوں نے کہا کہ مولانا نے چودھری برادران کے گھر پر اسٹیبلشمنٹ سے ملاقات کی بات کی۔ نوازشریف فوج کو کہتے ہیں کہ آپ آئیں اور بغاوت کریں۔ایک طرف فوج کو کہہ رہے ہیں کہ عمران خان کو گھر بھیجیں، دوسری طرف کہتے ہیں کہ فوج غیر آئینی طور پر کسی کو لے کر نہ آئے تو پھر اس میں تضاد ہے ۔
دوسری جانب پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے مسلم لیگ ن کے رہنما ملک احمد خان نے کہا کہ 31 دسمبر تک تمام اراکین پارلیمنٹ صوبائی و قومی اسمبلی اپنے ا ستعفے اپنی پارٹی قیادت کو جمع کروا دیں گے ۔ پی ڈی ایم کے متفقہ فیصلے کے مطابق استعفے متعلقہ سپیکرز کو دئیے جائیں گے ۔مولانا فضل الرحمٰن نے جو جی ایچ کیو کے سامنے دھرنے کی بات کی یہ ان کی ذاتی رائے ہوسکتی ہے ،اس کے وہ خود جوابدہ ہیں۔ مولانا کے لیے منافق کا لفظ غیر پارلیمانی ، اسے استعمال نہیں کرنا چاہئیے ۔ انہوں نے مزید کہا کہ نیب کے اپوزیشن پر بنائے بیشتر مقدمات غلط ہیں اور کسی عدالت میں بھی ثابت نہیں ہورہے ۔

یہ بھی دیکھیں

ایران و چین معاہدے پر امریکہ چراغ پا

امریکی صدر نے ایران اور چین کے 25 سالہ معاہدے پر سخت تشویش کا اظہار …