بدھ , 23 جون 2021

عراق میں امریکا کی ایک اور سازش کا انکشاف

امریکا نے ان عراقی گروہوں کو میدان سے دور کرنے کا فیصلہ کر لیا ہے جنہوں نے داعش کو شکست دی تھی۔

گزشتہ ہفتے اتوار کو امریکی سفارتخانے کو نشانہ بنا کر بغداد کے گرین زون علاقے پر کچھ راکٹ فائر ہوئے تھے۔ حالانکہ اس حملے میں کوئی زخمی نہیں ہوا تاہم یہ حملہ، عراق کے مزاحمتی گروہوں کے خلاف ایک ہتھکنڈے کے طور پر بدل گیا ہے۔

یہی مسئلہ اب مصطفی الکاظمی کی حکومت اور مزاحمتی گروہوں کے درمیان کشیدگی کی وجہ بن چکا ہے۔

اس سے پہلے عراق کے وزیر اعظم مصطفی الکاظمی اور وزیر داخلہ عثمان الغانمی اس حملے سے متعلق کچھ افراد کی گرفتاری کی بات کہہ چکے ہیں۔

گرفتار ہونے والوں میں عراق کے ایک مزاحمتی گروہ عصائب اہل الحق ارکان بھی شامل ہیں۔

یہ مسئلہ حکومت اور مزاحمتی گروہ کے درمیان شدید کشیدگی میں بدل گیا ہے۔ اپنے ساتھیوں کی گرفتاری سے ناراض عصائب اہل الحق کے ارکان نے بغداد میں انٹلیجنس شعبے کی عمارت کا محاصرہ کرتے ہوئے ان کی رہائی کا مطالبہ کیا ہے۔

عراق کے اس مزاحمتی گروہ کا کہنا ہے کہ بغداد میں امریکی سفارتخانے پر حملہ، امریکی سازش کا حصہ ہے۔

 

یہ بھی دیکھیں

گورنر سندھ کا وزیراعظم سے آئی جی سندھ کو عہدے سے ہٹانے کا مطالبہ

کراچی: سندھ کے گورنر عمران اسمٰعیل نے وزیراعظم عمران خان سے ملاقات کرکے سندھ پولیس …