منگل , 15 جون 2021

جانے کے دن آگئے، مگر عقل نہیں آئی

فارس نیوز کے مطابق مائیک پومپیو نے دعوا کیا کہ ایران کی پارلیمنٹ مجلس شورائے اسلامی کا منظور کردہ حالیہ بل در حقیقت جامع ایٹمی معاہدے کی خلاف ورزی شمار ہوتا ہے اور ایران کو حق نہیں کہ وہ کسی بھی سطح پر یورینیئم کو افزودہ کرے۔

امریکی وزیر کا یہ بیان ایسے وقت میں سامنے آیا ہے کہ ایٹمی عدم پھیلاؤ کے معاہدہ این پی ٹی کی بنیاد پر تمام رکن ممالک کو یورینیئم افزودہ کرنے کا حق حاصل ہے۔اسکے علاوہ سلامتی کونسل کی قرارداد بائیس اکتیس کے مطابق بھی ایران کو مسلمہ طور پر یہ حق حاصل ہے اور یہ مذکورہ کونسل اس حق کو ایک بین الاقوامی دستاویز کی حیثیت دے چکی ہے۔

امریکی حکام کے اس قسم کے بے بنیاد دعووں پر اظہار تعجب کرتے ہوئے اقوام متحدہ کے ویانا ہیڈکواٹر میں روسی نمائندے نے کہا تھا کہ این پی ٹی کے تمام رکن ممالک کو مسلمہ طور پر یورینیئم کی افزودگی کا حق حاصل ہے۔

20 فیصد تک یورنیم کی افزودگی کے اعلان کے بعد ایٹمی انرجی کے عالمی ادارے آئی اے ای اے کے انپسکٹروں کے مشن کو بند کئے جانے کے اعلان پر امریکی وزیر خارجہ مائيک پمپیوں نے کہا ہے ایران کو بقول ان کے کسی بھی سطح پر یورنیم افزودگی کی اجازت نہیں دی جا سکتی۔

مائک پمپیوںے ایران پرایٹمی بلیک میلنگ کا الزام لگاتے ہوئے کہا ہے کہ آئی اے ای اے کے انسپکٹروں کو نکالنے کی دھمکی جامع ایٹمی معاہدے کی خلاف ورزی ہے اور ایران کو یورنیئم افزودگی کی اجازت نہیں دی جا سکتی۔

امریکی وزیر خارجہ مایک پمپیو نے اسلامی جمہوریہ ایران کی پارلیمنٹ کی جانب سے پابندیاں ختم نہ کئے جانے کی صورت میں عالمی ایٹمی ایجنسی کے انسپکٹروں کو ایران سے نکالے جانے سے متعلق بل کی منظوری پر اپنا ردعمل ظاہر کرتے ہوئے یہ مضحکہ خيز‍ دعوی کیا ہے۔

پمپیو نے گزشتہ سب اپنے ایک بیان میں دعوی کیا کہ ایران کی جانب سے دی جانے والی دھمکی جامع ایٹمی معاہدے کے منافی بلکہ اس سے بھی بڑھ کر ایک اقدام ہے۔ پمپیو نے دعوی کیا کہ ایران عالمی سطح پر دہشت گردی کا حامی ہے لہذا اسے کسی بھی سطح یورنیئم افزودہ کرنے کی اجازت نہیں ہونی چاہیے۔

20 فیصد تک یورنیئم کی افزودگی اور پابندیاں ختم نہ کئے جانے کی صورت میں عالمی ایٹمی انرجی ایجنسی کے انسپکٹروں کو ایران سے نکالے جانے کے فیصلے کو پمپیو کی جانب سے ایک ایسے وقت جامع ایٹمی معاہدے کی خلاف ورزی قرار دیا جارہا ہے کہ امریکہ خود اس معاہدے کو تسلیم ہی نہیں کرتا اور اس دو سال قبل اُس سے باضابطہ طور پر علیحدگی اختیار کر چکا ہے۔

مبصرین کا کہنا ہے کہ مائیک پمپیو ملت ایران کے خلاف بیان بازی کرتے وقت یہ بھول جاتے ہیں کہ ایران نہ صرف یہ کہ خود امریکہ کی ہژمونی تسلیم نہیں کرتا بلکہ اس پورے خطے سے امریکیوں کی بالادستی کے خاتمے کے لئے کوشاں ہے۔

 

یہ بھی دیکھیں

کابل میں پھر دھماکے، آٹھ افراد جاں بحق، شیعہ ہزارہ نشانے پر

کابل: افغانستان کے دارالحکومت میں جمعرات کو ہونے والے دو الگ الگ بم دھماکوں میں …