اتوار , 7 مارچ 2021

چین کا فرانسیسی صحافی کو ملک سے نکالنے کا فیصلہ

چین نے ایک فرانسیسی صحافی عرسولہ گوچی کو شنکیانگ کی اوغر آبادی کے حوالے سے چین کی پالیسی پر تنقید کرنے کی پاداش میں ملک سے نکالنے کا فیصلہ کیا ہے۔بیجنگ میں حکام نے تصدیق کی ہے کہ فرانسیسی میگزین لابز سے منسلک عرسولہ گوچی کے پریس کارڈ کی تجدید نہیں کی جائے گی۔چینی حکام نے کہا ہے کہ فرانسیسی صحافی نے اپنے میگزین میں جو مضمون لگا ہے کہ اس سے دہشتگردی اور ظالمانہ اقدام کی حوصلہ افزائی ہوتی ہے۔فرانسیسی صحافی نے چینی حکام کے الزام کو لغو قرار دیتے ہوئے کہا کہ ان پر پابندی کا مقصد چین میں موجود غیر ملکی صحافیوں کی حوصلہ شکنی ہے۔اگر عرسولہ گوچی کے پریس کارڈ کی تجدید نہ کی گئی تو انھیں اپنے ویزے میں توسیع نہیں مل سکے گی اور انھیں 31 دسمبر تک چین سے نکلنا ہو گا۔
2012 میں الجزیرہ کی نمائندہ ملیسا چن کو ملک سے نکانے کے بعد فرانسیسی صحافی کو ملک سے نکالنے کا پہلا واقعہ ہے۔چین کا ہمیشہ سے موقف رہا ہے کہ شنکیانگ صوبے میں شدت پسند جن کے بیرونی ممالک کی شدت پسند تنظیموں سے رابطے ہیں، بدامنی کے ذمہ دار ہیں۔شنکیانگ کی آبادی جس کی اکثریت مسلمان ہیں، کا موقف ہے کہ انھیں مذہب اسلام کی وجہ سے بیجنگ کے جبر کا سامنا ہے۔

یہ بھی دیکھیں

شام پر حملہ کرنے والے اسرائیلی میزائل تباہ

شامی فوج نے صوبہ حماہ کی فضا میں اسرائیل کے میزائلی حملوں کو ناکام بنا …