بدھ , 3 مارچ 2021

دولت اسلامیہ کے گڑھ رمادی پر عراقی فوج کا قبضہ

حالیہ دنوں میں عراقی فوج نے پھندوں سے بھری عمارتوں اور دام سے پر گلیوں سے گزرتے ہوئے شہر کے قلب کی جانب اپنا راستہ بنایا اور راستے میں کئی اضلاع کو اپنے قبضے میں بھی لیا۔کہا جا رہا ہے کہ دولتِ اسلامیہ کے جنگجو شہر کے شمال مشرق کی طرف فرار ہو گئے ہیں۔فوجی ترجمان صباح النعمانی نے خبررساں ادارے روئٹرز کو بتایا: کمپلیکس ہمارے کنٹرول میں ہے اور کمپلیکس میں (دولت اسلامیہ کے) کسی جنگجوکا نام و نشان نہیں ہے۔اس کمپلیکس پر قبضے کا مطلب ہے کہ رمادی میں ان کی شکست ہو گئی ہے۔ دوسرا مرحلہ شہر میں ان علاقوں کو صاف کرنا ہے جہاں وہ ہو سکتے ہیں۔اس سے قبل سرکاری فورسزز کے ترجمان بریگیڈیئر یحیی رسول نے سنیچر کو کہا تھا کہ شہر کے علاقے ہوز میں، جہاں صوبائی حکومت کے دفاتر واقع ہیں، عراقی فوج نے پیش قدمی کی ہے۔بریگیڈیئر یحیی رسول کا کہنا تھا کہ فضائی بمباری زمینی افواج کی، پیش قدمی کرنے میں مدد گار ثابت ہوئی ہے۔خصوصی آپریشنز کے کمانڈر سمیع الآردی کا کہنا ہے کہ رمادی کو تین اطراف سے آزاد کروانے کا منصوبہ بنایا گیا ہے۔ ہماری فوج اب اپنے اہداف کی طرف پیش قدمی کر رہی ہے اس میں تاخیر مجرموں کی جانب سے گھروں اور دیگر عمارتوں میں نصب کیے گئے بموں کی وجہ سے ہو رہی ہے۔بریگیڈیئر یحیی رسول کے مطابق دولتِ اسلامیہ کے زیرِ کنٹرول علاقوں میں رہنے والے عام شہریوں نے مرکزی ہسپتال میں پناہ لے رکھی ہے کیونکہ انھیں معلوم ہے کہ سرکاری فوج ہسپتال کو نشانہ نہیں بنائے گی۔گذشتہ ماہ حکومتی فورسز نے رمادی شہر کو مکمل طور پر گھیر لیا تھا جس کی وجہ سے وہاں موجود دولتِ اسلامیہ کے جنگجو اپنے دوسرے مضبوط گڑھ انبار صوبے اور شام سے کٹ گئے تھے۔

یہ بھی دیکھیں

شام پر حملہ کرنے والے اسرائیلی میزائل تباہ

شامی فوج نے صوبہ حماہ کی فضا میں اسرائیل کے میزائلی حملوں کو ناکام بنا …