ہفتہ , 6 مارچ 2021

مغرب کی غلطیوں سے مشرقِ وسطی دہشت گردوں کی جنت بنا

ایران کے صدر حسن روحانی نے کہا ہے کہ مغربی ممالک کی سٹریٹیجک غلطیوں نے مشرقِ وسطی کو دہشت گردوں کی جنت بنا دیا ہے۔
اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سے خطاب کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ دولتِ اسلامیہ اور دیگر عسکریت پسند گروہوں کے ابھرنے کے پیچھے چند ریاستیں اور انٹیلی جنس ایجنسیاں ہیں، تاہم اس مسئلے کا حل مشرق وسطی ہی سے آنا چاہیے۔ایرانی صدر نے کہا: دنیا بھر کے انتہا پسند ایک دوسرے سے روابط قائم کر کے یکجا ہو گئے ہیں، لیکن کیا ہم انتہا پسندی کے خلاف یکجا ہیں؟برطانوی خبر رساں ایجنسی روئٹرز کے مطابق حسن روحانی نے کہا کہ مشرق وسطی میں شدت پسند تنظیموں کے ابھرنے کی وجہ بیرونی مداخلت ہے۔ان کا کہنا تھا کہ چند انٹیلی جنس ایجنسیوں نے پاگلوں کے ہاتھوں میں بلیڈ پکڑا دیے ہیں جو کسی کو نہیں چھوڑتے۔انھوں نے مزید کہا: ان تنظیموں کو بنانے اور حمایت کرنے کے پیچھے جو بھی تھے ان کو اپنی غلطی تسلیم کرنی چاہیے۔فرانسیسی خبر رساں ایجنسی اے ایف پی کے مطابق حسن روحانی نے خطاب میں کہا: مغرب نے مشرق وسطی، وسطی ایشیا اور قفقاز میں سٹریٹیجک غلطی کی ہے اور ان علاقوں کو دنیا بھر کے دہشت گردوں اور شدت پسندوں کی محفوظ پناہ گاہیں بنا دیا ہے۔انھوں نے مزید کہا کہ شام میں بے جا مداخلت غلط پالیسیوں کی ایک مثال ہے۔ان کا کہنا تھا کہ مشرق وسطی میں شدت پسندی کے مسئلے کا حل عالمی برادری کی حمایت سے اسی خطے سے آنا چاہیے۔ان کا مزید کہنا تھا کہ یہ بات غلط ہے کہ ایران خطے پر کنٹرول حاصل کرنا چاہتا ہے۔ایرانی صدر نے کہا کہ وہ ایران پر عائد پابندیوں کو ہٹانے کے خواہاں ہیں، اور ان پابندیوں کے باعث ایرانی معیشت اور آئل کمپنیوں کو نقصان پہنچا ہے۔حسن روحانی نے کہا کہ وہ نومبر سے قبل ایران کے ایٹمی پروگرام پر حتمی معاہدے چاہتے ہیں۔

یہ بھی دیکھیں

شہید قاسم سلیمانی کے قتل کا جواب امریکہ کو دینا ہو گا: ایران

مجید تخت روانچی نے ایران اور امریکہ کے مابین قیدیوں کے تبادلے کے سوال پر …