بدھ , 3 مارچ 2021

توہین عدالت کیس،وزیر اعظم کو بلایا تو واپس نہیں جائینگے،سپریم کورٹ

supreme-court

 

اسلام آباد: سپریم کورٹ میں سیکرٹری اسٹبلشمنٹ کیخلاف توہین عدالت کی درخواست کی سماعت کے دوران دورکنی بنچ کے سربراہ جسٹس عظمت سعید نے کہاہے کہ عدالتی احکامات پرعمل نہیں ہورہاتووزیر اعظم پاکستان کوبلالیتے ہیں وزیراعظم آئے توواپس دفتر نہیں جائیں گے اوراڈیالہ جیل میں بہت گنجائش ہے،عدالتی احکامات کی کسی کوخلاف ورزی نہیں کرنے دیں گے ،سیکرٹری اسٹیبلشمنٹ کوباربار بلایامگر وہ نہیں آئے ۔انھوں نے یہ ریمارکس پیرکودیے ہیں عدالت نے سیکرٹری اسٹبلشمینٹ کے پیش نہ ہونے پر اظہار برہمی کرتے ہوئے عدالتی احکامات کے مطابق کسٹم افسر عمر فاروق کی ترقی کا 48گھنٹے میں نوٹیفکیشن جاری کرنے کا حکم دیاہے اس دوران کسٹم افسر عمرفاروق کے وکیل عارف چوہدری نے عدالت کوبتایاکہ اسٹبلشمینٹ ڈویڑن نے سمری وزیراعظم کو بھجوائی تھی، آٹھ ماہ سے عدالت کے ساتھ کھیل کھیلا جا رہا ہے اس پر جسٹس شیخ عظمت سعید نے کہاکہ ایسی بات ہے تو وزیراعظم کو بلا لیتے ہیں،اڈیالہ جیل میں بہت گنجائش ہے، وزیراعظم آئے تو واپس دفتر نہیں جائیں گے اس پراٹارنی جنرل نے عدالت کویقین دہانی کرائی کہ عدالت کے احکامات پر عمل کریں گے، عدالتی حکم کے مطابق نیا نوٹیفکیشن جاری کر دیا جائے گا،عدالت نے 48گھنٹے کی مہلت دیتے ہوئے سماعت ملتوی کردی۔

یہ بھی دیکھیں

فلسطین کی آزادی اور اسرائیل کا خاتمہ، پاکستانی قوم کی خواہش

حماس کے رہنما اسمٰعیل ہنیہ نے کہا ہے کہ پاکستان نے ہمیشہ فلسطین کی حمایت …