پیر , 1 مارچ 2021

افغانستان میں تاجک سرحد کے قریب ہزاروں عسکریت پسند موجود ہیں

702825

دوشنبہ میں تاجکستان کے ساتھ افغانستان میں تاجک کی سرحد سے ملحقہ علاقے میں موجود عسکریت پسندوں کی وجہ سے پریشانی بڑھ رہی ہے، ان عسکریت پسندوں کی تعداد 5 ہزار سے کم نہیں ہے۔

یہ بات تاجکستان کی قومی سلامتی کی ریاستی کمیٹی کے ایک نمائندے کی طرف سے بتائی گی ہے۔ انہوں نے نشاندہی کی ہے کہ اس اسکواڈ میں طالبان عسکریت پسند ہیں، اسلامی تحریک ازبکستان کا گروپ ہے اور چند درجن تاجک افراد بھی ہیں۔ ریاستی کمیٹی کے نمائندے نے کہا ہے کہ عسکریت پسندوں کے حملوں کو روکنے کے لئے تاجکستان کے پاس بھرپور طاقت موجود ہے۔ اس کے علاوہ تاجکستان کو اجتماعی سلامتی کے معاہدے کی تنظیم کے ارکان کی طرف سے خاص طور پر روس کی طرف سے بھرپور مدد کی امید ہے۔ تاجکستان کی قومی سلامتی کی ریاستی کمیٹی کے نمائندے کا یہ بھی کہنا تھا کہ تاجکستان کی سرزمین پر واقع روسی فوجی اڈے پر بہترین لڑاکا فوج موجود ہے، گزشتہ سال مئی میں تاجک افغان سرحد کے قریب روسی فویجیوں نے مشترکہ فوجی مشقوں کے دوران بہترین صلاحیت کا مظاہرہ کیا۔

یہ بھی دیکھیں

برطانوی پارلیمنٹ فیکٹ فائنڈنگ مشن مقبوضہ کشمیر بھیجے گی

لندن (مانیٹرنگ ڈیسک) برطانوی پارلیمنٹ نے مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی پامالی پر تشویش …