پیر , 1 مارچ 2021

سن 2015 میں افغانستان میں ساڑھے تین ہزار پرامن شہری ہلاک ہو گئے

830086

سن 2015 میں افغانستان میں دہشت گردانہ حملوں اور ملسح تصادمات کے نتیجے میں ساڑھے تین ہزار افراد ہلاک اور سات ہزار چار سو زخمی ہو گئے، پرامن شہریوں کے تحفظ کے بارے میں اقوام متحدہ کی رپورٹ میں بتایا گیا ہے۔

"پچھلے سال بہت زیادہ بچے ہلاک اور زخمی ہو گئے۔ تصادمات کے شکار افراد میں سے ہر چوتھا بچہ ہے”، اقوام متحدہ نے کہا۔ اس کے علاوہ ہلاک ہونے والی اور زخمی ہونے والی عورتوں کی تعداد میں سن 2014 کے مقابلے میں 37 فی صد اضافہ ہوا۔

واضح رہے کہ پچھلے چند مہینوں سے افغانستان کی صورت حال بگڑتی جا رہی ہے۔ تحریک طالبان بڑے شہروں کو قبضے میں لینے کے لئے کوشاں ہے، اس کے علاوہ ملک میں داعش کا اثر و رسوخ بھی بڑھ رہا ہے۔

یہ بھی دیکھیں

برطانوی پارلیمنٹ فیکٹ فائنڈنگ مشن مقبوضہ کشمیر بھیجے گی

لندن (مانیٹرنگ ڈیسک) برطانوی پارلیمنٹ نے مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی پامالی پر تشویش …