منگل , 9 مارچ 2021

پاکستان کا قرضوں کی وجہ سے دیوالیہ ہوسکتا ہے

بین الاقوامی مالیاتی تجزیہ کار کمپنی بلومبرگ نے کہا ہے کہ پاکستان کے قرضوں کا گراف بڑھتا جارہا ہے اور خدشہ پیدا ہوگیا ہے کہ پاکستان اپنے قرضوں کے بوجھ تلے دیوالیہ ہوسکتا ہے۔

1929730

بین الاقوامی مالیاتی تجزیہ کار کمپنی بلومبرگ نے کہا ہے کہ پاکستان کے قرضوں کا گراف بڑھتا جارہا ہے اور خدشہ پیدا ہوگیا ہے کہ پاکستان اپنے قرضوں کے بوجھ تلے دیوالیہ ہوسکتا ہے۔ بلومبرگ کے مطابق گزشتہ 5 برس کے دوران پاکستان کے قرض کی عدم ادائیگی کا گراف 56 بیس پوائنٹس تک پہنچ گیا ہے اور یہ یونان، وینیزویلا اور پرتگال کے بعد کسی ملک کا سب سے بڑا اضافہ ہے۔ بلومبرگ کے مطابق 2016 کے وسط تک پاکستان کا غیرمعمولی قرض ادائیگی کے وقت تک پہنچ جائے گا جو قریباً 50 ارب ڈالر کے برابر ہے۔ پاکستان نے 2013 میں غیرملکی ادائیگیوں کے لیے بین الااقوامی مالیاتی فنڈ سے 6.6 ارب ڈالر کا قرض لیا تھا اور معیشت کی شرح نمو 4.5 تجویز کی جارہی ہے جو 8 سال میں سب سے بلند ہے۔ فچ ریٹنگ سے وابستہ پاکستانی ماہر مرون ٹینگ نے کہا ہے کہ پاکستان بین الاقوامی مارکیٹوں کے لحاظ سے بہت حساس ہوچکا ہے اور 2016 کے اختتام تک اس کے قرضوں کے حجم میں 79 فیصد کا اضافہ ہوجائے گا جب کہ دوسری جانب آئی ایم ایف کی جانب سے پی آئی اے سمیت اہم اداروں کی نجکاری تو نہ ہوسکی تاہم ادارے کے ملازمین کی ہڑتال سے وقتی بحران نے مالیاتی نقصان میں مزید اضافہ ضرور کردیا ہے۔ پاکستان کو رواں سال جولائی تا ستمبر میں 30 ارب ڈالر واپس کرنے ہیں جب کہ 30 جون کو قومی بجٹ بھی پیش کیا جانا ہے جس کا ہدف 124 ارب ڈالر یا 13 کھرب پاکستانی روپے ہیں۔

یہ بھی دیکھیں

فلسطین کی آزادی اور اسرائیل کا خاتمہ، پاکستانی قوم کی خواہش

حماس کے رہنما اسمٰعیل ہنیہ نے کہا ہے کہ پاکستان نے ہمیشہ فلسطین کی حمایت …