اتوار , 25 جون 2017

عالمی وسائل دہشت گردوں کے نشانے پر

(تسنیم خیالی)
یہ بات عالمی قوانین کے مطابق ہے کہ جنگوں کے دوران شہریوں اور جنگجوئوں کے درمیان فرق کرنا چاہیے، عالمی قوانین شہریوں کے تحفظ پر زور دیتے ہیں اور شہریوں پر حملہ کرنے سے منع کرتےہیں اور اس حوالے سے عالمی طور پر کئی معاہدے ہوئے ہیں۔
ان قوانین کی خلاف ورزی اسرائیل نےفلسطینی اور لبنانی شہریوں کیساتھ کی، اسرائیل نے لاتعداد مرتبہ فلسطینی اور لبنانی شہریوں کو نشانہ بنایا۔حال ہی میں داعش اور النصرہ فرنٹ جیسی دہشت گرد تنظیموں نے بھی یہی طریقہ کار اپنایا ،ان تنظیموں نے شہریوںکو ڈھال کے طور پر استعمال کیا،علاوہ ازیں دہشت گردوں نے دمشق میں رہنے والے 40 لاکھ شہریوں کا پانی بھی بند کردیا۔ علاوہ ازیں حیان نامی گیس کمپنی کے مرکز کو دھماکے سے اڑادیا جو مشرقی حمص کو 180ٹن گھروں میں استعمال ہونے والا گیس فراہم کرتا تھا کمپنی علاقے میں بجلی گھر میں بجلی پیدا کرنے کے لیے گیس کی سپلائی کرتی ہے۔ اس گیس کمپنی کے ذمے اور بھی گئی ذمہ داریاں تھی جو بلاشبہ دھماکے سے اڑائے جانے کے بعد علاقے کے شہریوں کو کافی مشکلات کا سامنا ہوگا شام کے علاوہ یہی صورت حال موصل میں بھی ہے ۔جہاں داعش نے موصل کے کئی علاقوں کو پانی سے محروم کردیا ہے۔ سوال یہ ہے کہ دہشت گرد تنظیمیں شہریوں کیخلاف انتقامی کارروائیاں کیوں کررہی ہے؟
دہشت گرد تنظیموں کا شہریوں کو نشانہ بنانے کی وجوہات
۱۔ دہشت گرد تنظیموں کی مسلسل ناکامیاں جو انکی بے عزتی کا باعث بنی ہوئی ہے ،یہ تنظیمیں حلب سے لیکر موصل تک ہونے والی ناکامیوں کا بدلہ اب شہریوں سے لے رہی ہیں تاکہ ان کےحوالے سے قائم ہونے والا خوفناک تصور پھر سے قائم ہوجائے جو دراصل غباروں کے ہواسے بڑھ کر نہیں۔
۲۔ دہشت گرد تنظیمیں نظامی افواج کے زیر کنٹرول علاقوں میں رہنے والے شہریوں سے شدید نفرت کرتی ہیں اور ہرشکست کے بعد انہیںا نہی علاقوں کے شہری انتقامی کارروائیوں کیلئے دکھائی دیتے ہیں۔
۳۔ دہشت گردی کی سوچ اور ایڈیالوجی ایسی مذموم حرکتوں کی اجازت دیتی ہے جسکے تحت معصوم شہری قتل کرنا جائز ہے۔
۴۔ عالمی برادری اور میڈیا کی نظر اندازی دہشت گردوں کے لیے حوصلہ افزائی کا باعث بنی ہوئی ہے۔
دہشت گرد تنظیموں کا اس نہج پر پہنچنے سے ظاہر ہوتا ہے کہ یہ تنظیمیں کمزور ہوتی جارہی ہیں اور اپنی آخری سانس لے رہی ہیں بات صرف وقت کی ہے کہ جب یہ تنظیمیںماضیٰ کے صفحوں میںگم ہوجائیں گی۔

یہ بھی دیکھیں

مکہ میں دھماکے سے قبل فائرنگ کے مناظر

مکہ میں دھماکے سے قبل فائرنگ کے مناظر

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے