بدھ , 18 جنوری 2017

پولینڈ میں امریکی فوج کی تعیناتی، روس کی خود مختاری کے لیے واضح خطرہ

واشنگٹن (مانیٹرنگ ڈیسک )امریکہ کے ایک سیاسی تجزیہ نگار نے پولینڈ میں امریکی فوجی تعیناتی کو اشتعال انگیز قرار دیتے ہوئے اسے ماسکو کی خودمختاری کیلئے واضح خطرہ قراردیاہے۔امریکی سیاسی تجزیہ نگار ’’برائن بیکر‘‘نے پریس ٹی وی کے ساتھ انٹرویو میں امریکہ کی طرف سے پولینڈ میں فوجی تعیناتی کی تنقید کرتے ہوئے اسطرح کی فوجی تعیناتی کو اشتعال انگیز اور ماسکو کی خودمختاری کیلئے واضح خطرہ قراردیا ہے۔
انہوں نے کہاکہ 1991 ء کے بعد سویت یونین کے ٹوٹ جانے کے بعد سے نیٹو اور امریکہ مسلسل طورپر مشرق کی جانب روسی سرحدوں کی طرف پیشقدمی کررہے ہیں۔انہوں نے کہاکہ 25 برس پہلے جب سویت یونین بکھر گیاتھا امریکہ اور روس کے درمیان یہ معاہدہ طے ہوا تھا کہ امریکہ مشرق وسطیٰ ریاستوں میں جوکہ روس کے اتحادی ہیں کی طرف فوجی تعیناتی عمل میں نہیں لائے گا لیکن امریکہ نے اس معاہدے کی دھجیاں اُڑا کر روسی سرحدوں کے قریب اپنی فوجی مہم برقرار رکھی۔
انہوں نے کہا کہ روس اگر چہ بالٹک ریاستوں پر حملہ کرنے کا کوئی ارادہ نہیں رکھتا ہے لیکن امریکہ پھر بھی رومانیہ میں میزائل تنصیبات قائم کرکے فوجی برتری حاصل کرنے میں لگا ہے۔موصوف تجزیہ کار کے مطابق امریکہ نے رومانیہ اور پولینڈ میں ایران کے جوہری خطرے کے بہانے میزائل تنصیبات قائم کی ہیں جبکہ ایران کے جوہری خطرے کا حقیقت میں کوئی وجود ہی نہیں ہے اورجب چھ عالمی طاقتوں نے ایران کے ساتھ جوہری معاہدے طے کیا ہے تو واشنگٹن کے میزائل نظام کو قائم کرنے کا کوئی جواز ہی نہیں ہے۔
انہوں نے کہاکہ اگر امریکہ کو جنگ شروع کرنے کا کوئی ارادہ نہیں ہے تو نیٹو کے ساتھ ملکر روس کی دہلیز پر فوجی مشقیں انجام دینے کا کیا مطلب ہے ۔انہوں نے کہاکہ پولینڈ ،لٹویا ،لتھوانیا اورایسٹونیا کی عوام نے کبھی بھی امریکہ اور اسکے نیٹو اتحادیوں سے نہ روس کی شکایت کی نہ ہی روس سے بچانے کیلئے ان سے مدد طلب کی ۔امریکی تجزیہ کار کے مطابق شام ،لیبیا اور یوکرائن میں ہونے والے واقعات کے بعد سے امریکہ اور روس کے درمیان تعلقات کشیدہ ہیں اوراسی وجہ سے امریکہ نے پولینڈ میں اپنی فوج تعینات کی ہے جبکہ حقیقت یہ ہےکہ روسی صدر ولادمیر پوتن دوسرے ممالک پر حملہ کرنے کی سوچ نہیں رکھتے ہیں۔
برائن بیکر نے مزید امریکہ کے نومنتخب صدر ڈونالڈ ٹرمپ کے روس کے ساتھ تعلقات بحال کرنے کے وعدوں پر تبصرہ کرتے ہوئے کہاکہ ڈونالڈ ٹرمپ روس کے ساتھ تعلقات بحال کرنے سے قاصر ہیں کیونکہ امریکی وائٹ ہاوس پر ان سیاستدانوں کا غلبہ ہے جو روس کے ساتھ دشمنی رکھتے ہیں ۔

یہ بھی دیکھیں

55 فیصد امریکی، ٹرمپ کا احترام نہیں کرتے : سروے

واشنگٹن (مانیٹرنگ ڈیسک ) امریکا کے گلوپ مرکز کی جانب سے کرائے گئے سروے کے ...

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے