بدھ , 19 جنوری 2022

کورونا وائرس، امریکا شرح سود کم کرنے پر مجبور

واشنگٹن: امریکا کے مرکزی بینک نے منگل کے روز کورونا وائرس کے پھیلائو سے عالمی معیشت کو درپیش خطرات کے باعث ہنگامی بنیادوں پر شرح سود میں کمی کا اعلان کردیا، امریکی صدر اس کا بہت عرصے سے مطالبہ کررہے تھے تاہم وہ اس کمی سے بھی مطمئن نہیں ہیں اور مزید کمی خواہاں ہیں۔ تاہم کئی معاشی ماہرین نے تشویش کا اظہار کیا ہے کہ شرح سود میں کمی کے جارحانہ اقدام کے دور رس نتائج مرتب ہوں گے اور دنیا بھر میں پریشانی کے شکار سرمایہ کار اس اقدام کو امریکی مرکزی بینک کے دیوالیہ ہونے کے امکان کے طور پر دیکھیں گے۔ ورلڈ بنک نے کورونا سے نمٹنے کے لیے 12 ارب ڈالر امداد کا اعلان کردیا ہے۔ امریکی فیڈرل پالیسی کمیٹی نے شرح سود میں نصف پوائنٹ کمی کرتے ہوئے اس کی حد 1.0 سے لیکر 1.25 تک مقرر کردی، یہ 2008 کے آخر میں عالمی معاشی بحران کے بعد امریکا میں سب سے بڑی کمی ہے۔ دوسری جانب اوپیک ممالک کورونا وائرس کے باعث تیل کی گرتی ہوئی قیمتوں کے حوالے سے ویانا میں کل جمعرات کو مذاکرات کریں گے۔

یہ بھی دیکھیں

صنعا پر جارح سعودی اتحاد کی وحشیانہ بمباری، بارہ شہید، گیارہ زخمی

صنعا: جارح سعودی اتحاد کے بمبار جہازوں نے پیر کی شام کو صوبے صنعاء کے …