منگل , 25 جنوری 2022

سعودی عرب کرونا وائرس کے حقائق فاش کرنے پر میڈیا اور انسانی حقوق کے کارکنان کی گرفتاریاں

سعودی عرب میں کورونا وائرس کے حقائق فاش کرنے پر میڈیا اور انسانی حقوق کے کارکنان کے خلاف بڑے پیمانے پر گرفتاریاں کی گئی ہے۔ انسانی حقوق کے ایک حقوق گروپ کا کہنا ہے کہ سعودی حکام نے میڈیا کارکنوں اور انسانی حقوق کی مہم چلانے والوں کے خلاف بڑے پیمانے پر گرفتاری مہم کا آغاز کیا ہے ، اور عالمی سطح پر کورونا وائرس کے وبائی مرض کا فائدہ اٹھایا ہے۔یہ یاد رہے اس وقت پوری دنیا کرونا کے لپیٹ میں ہے جس کی وجہ سے وہ اپنے اپنے ملک میں کرونا کے سدباب پر توجہ مرکوز کیے ہوئے ہیں تو دوسری جانب عالمی توجہ کو مصروف دیکھتے ہوئے سعودی عرب نے اپنے ملک میں انسانی حقوق کی خلاف ورزی اور میڈیا کے خلاف کارروائیوں کا آغاز کرتے ہوئے کئی انسانی حقوق کے کارکنان اور میڈیا ورکرز کو گرفتار کیا ہے

حقوق گروپ قیدیوں کا ضمیر ، جو ایک آزاد غیر سرکاری تنظیم ہے جو سعودی عرب میں انسانی حقوق کے فروغ کے لئے کوشاں ہے ، نے اپنے سرکاری ٹویٹر پیج پر ایک پوسٹ میں اعلان کیا ہے کہ سعودی عہدیداروں نے ایک وسیع صوابدیدی نظربندی مہم چلائی ہے۔ حقوق گروپ نے پی ایچ ڈی کے طالب علم ماجد الغامدی کے ساتھ ساتھ سوشل میڈیا کارکن محمد الجداعی اور منصور الرقیبہ کو سعودی حکومت کے کرونا وائرس سے مطلق متنازعہ اعدادو شمار کو فاش کرنے پر گرفتارکر لیا ہےانسانی حقوق کے گروپ جو ریاست کی نگرانی کرتے ہیں کہتے ہیں کہ سعودی عرب کی طرف سے اختلافات کو روکنے کے لئے طویل عرصے سے چلائی جانے والی مہم میں اب تیزی آئی ہےفروری کو عربی زبان کی الخلیج آن لائن نیوز ویب سائٹ نے قیدیوں کے ضمیر کے ذریعہ شائع کردہ ایک پوسٹ کے حوالے سے بتایا ہے کہ سعودی عہدیداروں نے سرکاری ملکیت سعودی نشریاتی اتھارٹی (ایس بی اے) کے سابق ڈائریکٹر جنرل ، داؤد الشیرین کو حراست میں لیا ہے۔

یہ بھی دیکھیں

عرب امارات میں سرمایہ کاری صفر ہوجائے گی، یمنی رہنما کا سخت انتباہ

صنعا: یمن کی اعلی سیاسی کونسل کے سینیئر رکن محمد البخیتی نے بیرونی سرمایہ کاروں …