منگل , 26 اکتوبر 2021

امریکا:سیٹل میں مظاہرین کے پولیس فری زون میں فائرنگ سے ایک شہری ہلاک

سیٹل: امریکا میں مظاہرین کی جانب سے واشنگٹن کے شہر سیٹل میں بنائے گئے خودمختار پولیس فری زون میں فائرنگ سے ایک شہری ہلاک اور دوسرا شدید زخمی ہوگیا۔

خبرایجنسی اے ایف پی کی رپورٹ کے مطابق مقامی انتظامیہ کا کہنا تھا کہ جائے وقوع پر پولیس کو زخمیوں تک جانے سے روک دیا گیا تھا۔

خیال رہے کہ امریکا میں سیاہ فام شہری جارج فلائیڈ کی پولیس کے ہاتھوں ہلاکت کے بعد شروع ہونے والی ملک گیر احتجاجی تحریک نے سیٹل کے اس علاقے کو پولیس فری بنادیا تھا۔

مظاہرین نے احتجاج کے تقریباً 2 ہفتے کے بعد مغربی شہر کیپٹل ہل کے قریبی علاقے کو پولیس سے خالی کرادیا تھا۔

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے اس قدم کو بحران قرار دیا اور کہا کہ وہاں پر انارکی پھیلانے والے افراد بائیں بازوں کے متعصب ہیں۔

سیٹل کے محکمہ پولیس نے ایک بیان میں کہا کہ ‘افسران نے فائرنگ میں زخمی ہونے والے افراد تک رسائی کی کوشش کی لیکن مشتعل ہجوم نے انہیں زخمیوں تک پہنچنے سے روک دیا’۔

پولیس کا کہنا تھا کہ زخمی ہونے والے دوسرے شہری کی حالت بھی خطرے میں ہے تاہم ہسپتال میں زیرعلاج ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ فائرنگ کرنے والے افراد فرار ہوگئے اور ملزمان کے حوالے سے کوئی علم نہیں ہے۔

مقامی میڈیا کے مطابق فائرنگ کا تعلق احتجاج سے نہیں ہے۔

جائے وقوع کی فوٹیج میں دکھایا گیا ہے کہ پولیس افسران زخمیوں تک پہنچنے کی کوشش کررہے ہیں لیکن انہیں روک دیا گیا ہے۔

سیٹل کے میئر جینی درکان نے ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے دھمکی کے باوجود خودمختار زون کا دفاع کیا تھا جبکہ گورنر جے انسلی نے امریکی صدر کو مخاطب کرکے کہا تھا کہ ‘ایک ایسا آدمی کوحکومت کرنے میں مکمل طور پر نااہل ہو اس کو واشنگٹن کے معاملات سے دور رہنا چاہیے’۔

ڈونلڈ ٹرمپ نے گزشتہ روز ایک بیان میں مظاہرین سے کہا تھا کہ ‘آپ کے لیے میری طرف سے ایک پیش کش ہے، میں نے کہا جب آپ چاہیں گے ہم آجائیں گے اور اس کوصرف ایک گھنٹے میں ٹھیک کردیں گے’۔

ان کا کہنا تھا کہ ‘اب شاید میں غلط ہوں لیکن بظاہر ہمارے لیے بہتر ہے ہم اس بحران کو دیکھیں’۔

دوسری جانب سیٹل کے حکام کا کہنا تھا کہ خودمختار زون بنانے میں بائیں بازو کےکارکنوں کا کوئی عمل دخل نہیں ہے۔

یاد رہے کہ امریکا میں سیاہ فام شہری جارج فلائیڈ کی پولیس کے ہاتھوں ہلاکت کے بعد پورے ملک میں شدید احتجاج کیا گیا تھا۔

امریکا کے علاوہ دنیا بھر میں نسل پرستی کے خلاف احتجاج ہوا تھا اور امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے پولیس کے نظام میں اصلاحات کے مسودے پر دستخط بھی کردیے تھے۔

رواں ہفتے اقوام متحدہ کی انسانی حقوق کونسل نے امریکا میں سیاہ فام شہری جارج فلائیڈ کی پولیس کے ہاتھوں ہلاکت کے بعد ہونے والے احتجاج پر بحث کے بعد قرارداد پر ووٹنگ کی تھی۔

یہ بھی دیکھیں

لبنان کو ایرانی تیل کی ترسیل کا سلسلہ جاری

تہران: ایرانی ایندھن کا حامل ایک اور کاروان شام کے راستے لبنان میں داخل ہو …