جمعہ , 22 اکتوبر 2021

ایرانی عہدیدار کا شہید قاسم سلیمانی کے ساتھ شہادت سے ایک گھنٹے پہلے ہونے والی گفتگو پر تبادلہ خیال

اسلام آباد: ایرانی عہدیدار محسن رضائی نے پیر کے روز شہید قاسم سلیمانی کی شخصیت پر اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ قدس فورس کے شہید رہنما ، میجر جنرل ، قاسم سلیمانی کا نظریہ ایک نیا عالمی نظام قائم کرنے میں مدد فراہم کرسکتا ہے۔ ابلاغ نیوز نے المصدر نیوز کے حوالہ دیتے ہوئے لکھا ہے کہ ایک ایرانی عہدیدار محسن رضائی نے شہید قاسم سلیمانی سے ان کی شہادت سے ایک گھنٹہ پہلے ہونے والی گفتگو کے بارے میں اظہار خیال کیا ہے۔

انہوں نے کہا شہید قاسم سلیمانی کا نقطہ نظر انسان کے بارے میں یہ تھا کہ انسان اس دنیا میں برائی کے خلاف جہاد کریں اور الٰہی ذمہ داریوں کی ادئیگی میں سوچ و تدبیر کے ساتھ کام کریں۔انہوں نے کہا کہ وہ ذمہ داری کے تعین کے لیے ایک سرپرست کو لازم سمجھتے تھے اور اس سرپرست کی پیروی لازمی سمجھتے تھے ۔ قیدیوں اور مجرموں کے حوالے سے ان کا کہنا تھا کہ ان کے ساتھ انسانی اور اخلاقی اقدار کو مد نظر رکھتے ہوئے نمٹا جائے۔انہوں نے شہید قاسم سلیمانی کی شخصیت پر بات کرتے ہوئے مزید کہا کہ قاسم سلیمانی ہمیشہ اجتماعی فکر کو متاثر کرنے کی کوشش میں رہتے تھے اور وہ سمجھتے تھے کسی بھی کام کی کامیابی اس وقت تک ممکن نہیں ہے جب تک آپ ہر عام و خاص کو متاثر نہیں کر ینگے یعنی کسی بھی بڑے ہدف کی کامیابی کے لیے ضروری ہے کہ آپ اس خطے یا اس علاقے کی اجتماعی ذہنوں کو متاثر کریں۔

شہید قاسم سلیمانی اپنی زندگی کے آخری لمحات میں اسی کوشش میں تھے اور یہی ان کا مقصد تھا کہ وہ اجتماعی طور پر لوگوں کو اس بات پرقائل کرسکے کہ بُرائی کے خاتمے کے لیے مل کر جدوجہد کریں بالخصوص شام و عراق میں وہ یہی چاہتے تھے کہ ان ممالک کے لوگ دہشت گردی اور دہشت گرد سوچ کے خلاف مل کر آواز اٹھائیں اور مل کر لڑیں۔انہوں نے کہا آج دنیا کو ایک نئے نظام کی ضرورت ہے اور اس نئے نظام کے لیے شہید قاسم سلیمانی کا نقطہ نظر اور ان کی تعلیمات کار آمد ہے

یہ بھی دیکھیں

لبنان کو ایرانی تیل کی ترسیل کا سلسلہ جاری

تہران: ایرانی ایندھن کا حامل ایک اور کاروان شام کے راستے لبنان میں داخل ہو …