منگل , 19 اکتوبر 2021

ٹرمپ نے سی آئی اے کو ایران کے خلاف سائبر وار شروع کرنے کا حکم دیدیا ہے؛ انکشاف

ٹرمپ نے سی آئی اے کو ایران کے خلاف  سائبر وار شروع کرنے کا حکم دیدیا ہے۔ ابلاغ نیوز نے مون آف البما کا حوالہ دیتے ہوئے لکھا ہے کہ حال ہی میں ایران میں ایسے متعدد واقعات ہوئے ہیں جہاں نامعلوم آگ یا دھماکے نے کچھ بنیادی ڈھانچہ تباہ کردیئے ہے۔جس کے بعد یہ انکشاف کیا جاتا ہے کہ ٹرمپ نے ایران کے خلاف سائبر جنگ شروع کرنے کے سی آئی اے کو احکامات دیئے ہیں۔
جون کے بعد سے ایران میں  چھ فیکٹریوں اور دیگر مقامات پر آگ یا دھماکے پھوٹ پڑے ہیں دھماکوں سے متاثرہ مقامات  میں دو جوہری پلانٹ بھی شامل ہے تاہم حیرت انگیز بات یہ تھی کہ نتنز میں ایران کے جوہری کمپلیکس میں سنٹری فیوج اسمبلی میں دھماکہ ہوا۔جس کے بعد یہ ایک نامعلوم ذرائع سے یہ انکشاف بھی سامنا ہے کہ ان دھماکوں کے پیچھے امریکی انٹیلی جنس ایجنسی سی آئی اے ہے تاہم اس کی ابھی تک کسی مصدقہ ذرائع سے تصدیق نہیں ہوئی ہے۔ اگرچہ نتنز میں پیش آنے والے واقعے کے علاوہ دوسرے واقعات میں  تخریب کاری کے آثار نظر آتے ہیں جیسے اسپتال میں گیس سلنڈروں کے حالیہ دھماکے پرانے حادثات کی طرح نظر آتے ہیں۔اس سے عکس کیا جا سکتا ہے کہکوئی ایران میں خوف اور عدم یقینی پیدا کرنے کی کوشش کر رہا ہے اور ایران مخالف میڈیا اس کا خوب پروپیگنڈا بھی کر رہا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: شہید جنرل قاسم سلیمانی کے پاس امریکا اور داعش کے درمیان خفیہ رابطوں کی ویڈیو فوٹیجز اور آڈیو کپلز تھے؛ایرانی عہدیدار کا انکشاف

بدھ کے روز بوشہر میں ایک شپ یارڈ پر آگ بھڑکتے ہی ٹوئٹر پر بیٹھے مغرب زہ اذہان نے قیاس آرائی کی کہ یہ واقعہ پچھلے دنوں ہونے والے دھماکوں کا تسلسل ہے ان لوگوں کا کہنا تھا کہ بوشہر کے قریب ایران کے ایٹمی ری ایکٹر سے اس کا تعلق ہے۔اُدھر ایران کا کہنا ہے کہ بوشہر سے متعلق ایسی قیاس آرائی بکواس ہے۔ کبھی کبھی شپ یارڈ پر آگ لگ جاتی ہے۔ ان تنقید کرنے والوں کو چاہیے کہ وہ امریکی بحریہ کے ایک ارب ڈالر والے بحری جنگی جہاز میں ہونے والے دھماکے کے بارے میں بتائیں جو مسلسل تین دنوں سے جل رہا ہے اور  40،000 ٹن فیڈ اسٹاک میں تبدیل ہو گیا ہے۔ ایران میں آج کے شپ یارڈ آتشزدگی سے شہریوں کے لیے بنائے گئے لکڑی کے چھوٹی سات کشتیاں جل گئی ہے ر یہ خلیج فارس میں ساحلی ٹریفک کے لئے استعمال ہوتی ہے۔

ادھر اسرائیل نے بالواسطہ طور پر نتنز واقعے کی ذمہ داری قبول کی ہے۔اس واقعہ کے بارے میں جانکاری رکھنے والے مشرق وسطی کے انٹیلیجنس اہلکار نے کہا کہ اسرائیل نتنز جوہری کمپلیکس پر ایک طاقتور بم کے استعمال کا ذمہ دار ہے۔ اسلامی انقلابی گارڈز کور کے ایک ممبر کو ، جس کو اس معاملے پر بریف کیا گیا ، نے یہ بھی کہا ہے کہ اس دھماکے میں  دھماکہ خیز مواد استعمال کیا گیا تھا۔
اسرائیلی دعوؤں کے بارے میں  مجھے شک ہے۔ زیادہ امکان ہے کہ اسرائیل کی اس تخریبکاری میں سی آئی اے بھی شامل ہے۔
ایران کے خلاف امریکا کی جانب سے سی آئی اے کے ذریعے ایک شدید پروپیگنڈے اور دیگر تخریبکاری سرگرمیاں چلائی جا رہی ہے۔ ٹرمپ نے سی آئی اے کے ایران مخالف مشن کے سربراہ ‘پرنس آف ڈارکنس’ کو مقرر کیا ہے ، بلکہ انہوں نے سی آئی اے کو ایران کے خلاف سائبر جنگ شروع کرنے کے احکامات دیئے ہیں۔

یہ بھی دیکھیں

ایرانی و ہندوستانی وزرائے خارجہ کی ملاقات، باہمی تعاون کے مزید فروغ کے لئے پر عزم

نیویارک: اسلامی جمہوریہ ایران اور ہندوستان کے وزرائے خارجہ کے درمیان اقوام متحدہ کی جنرل …