اتوار , 28 نومبر 2021

دہشت گرد ملاعمرکےبیٹے محمد یعقوب دہشت گرد تنظیم طالبان ملٹری ونگ کےسربراہ مقرر

کابل: دہشت گرد نظیم افغان طالبان نے ملا عمر کے بیٹے ملا محمد یعقوب کو ملٹری ونگ کا سربراہ بنا دیا ہے۔ اس سے قبل اطلاعات کے مطابق دہشت گرد تنظیم طالبان کے امیر ملا ہیبت الله نے ملا یعقوب کو طالبان عسکری ونگ کا سربراہ منتخب کیا تھا۔ابلاغ نیوز نے امریکی خبر رساں ایجنسی ایسوسی ایٹڈ پریس کے مطابق افغان حکومت سے ممکنہ مذاکرات کے لیے دہشت گرد تنظیم افغان طالبان نے بڑی تبدیلی کرتے ہوئے سابق دہشت گرد افغان طالبان کے امیر ملا محمد عمر کے بیٹے ملا محمد یعقوب کو ملٹری ونگ کا سربراہ بنا دیا ہے۔

ایسوسی ایٹڈ پریس سے گفتگو میں دہشت گرد تنظیم طالبان حکام نے نام نہ ظاہر کرتے ہوئے یہ بھی کہا ہے کہ افغان حکومت کے ساتھ مذاکرات کے لیے دہشت گرد تنظیم طالبان نے اپنی مذاکراتی ٹیم میں طاقتور شخصیات کو شامل کیا ہے۔دہشت گرد تنظیم طالبان کا کہنا ہے کہ 20 رکنی مذاکراتی ٹیم میں مزید 4 ارکان کا اضافہ بھی کیا گیا ہے۔ نئی مذاکراتی ٹیم میں ملا ہیبت اللہ کے قریبی ساتھی اور اہم رہنما عبدالحکیم کے ساتھ  دہشت گرد تنظیم طالبان حکومت میں چیف جسٹس کے طور پر تعینات رہنے والے مولوی ثاقب بھی شامل ہیں۔

دہشت گرد طالبان کے مطابق وفد میں تبدیلی کا فیصلہ امیر ملا ہیبت اللہ کی ہدایت پر کیا گیا ہے جس کا مقصد تحریک کے فوجی اور سیاسی بازؤں پر اپنی گرفت مضبوط کرنا ہے۔واشنگٹن میں موجود یو ایس انسٹیٹیوٹ آف پیس کے ایشیا پروگرام کے نائب صدر اینڈریو وائلڈر کا کہنا ہے کہ میں کہوں گا کہ یہ ایک مثبت پیشرفت ہے کیونکہ دہشت گرد تنظیم طالبان ایک ایسا وفد تیار کر رہے ہیں
جو زیادہ تجربہ کار اور وسیع البنیاد ہے۔

افغانستان کے لیے امریکی نمائندہ خصوصی زلمے خلیل زاد نے ایک ٹویٹ میں کہا تھا کہ امریکا نے معاہدے کے پہلے مرحلے کے تحت فوجیوں کی تعداد کم کرنے اور پانچ فوجی اڈے خالی کرنے کے وعدے پر عمل کیا ہے۔ ہم قیدیوں کی رہائی، تشدد کم کرنے اور بین الاافغان مذاکرات پر زور دیں گے۔ انہوں نے افغان سکیورٹی فورسز پر حملوں کی مذمت کی اور یہ بھی کہا تھا کہ دہشت گرد تنظیم طالبان نے امریکی اور نیٹو فورسز پر کوئی حملہ نہیں کیا ہے۔

 

یہ بھی دیکھیں

لبنان کو ایرانی تیل کی ترسیل کا سلسلہ جاری

تہران: ایرانی ایندھن کا حامل ایک اور کاروان شام کے راستے لبنان میں داخل ہو …