ہفتہ , 18 ستمبر 2021

صہیونی جیل میں قید بے قصور فلسطینی ماں تاحال نظر بند

قابض ریاست میں صہیونی انتظامی حراست کی غیر قانونی پالیسی کے تحت قید کیےجانے والے بے قصور فلسطینیوں کودر حقیقت فلسطینی کہلائے جانے کی سزائیں دی جاتی ہیں جس کی ایک مثال پانچ بچوں کی ماں کو بے بنیاد الزامات کی پاداش میں دس سال قید ہے ۔

ذرائع کے مطابق گزشتہ روز  قابض صہیونی ریاست میں پانچ بچوں کی کفالت کرنے والی فلسطینی ماں جن کا نام فدوى حمادہ بتایا جاتا ہے کی بغیر کسی جرم کے گرفتاری کو تیرہ روز گزر چکے ہیں تاہم صہیونی حکام کی جانب سے اب تک کسی قسم کی وضاحت سامنے نہیں آئی ہے ۔

مقامی ذرائع کے مطابق اسیر فدوى حمادہ کوغاصب صہیونی عدالت نے انتظامی حراست کی غیر قانونی پالیسی کے تحت10سال قید کی سزا سناتے ہوئے نظر بند کر دیا جس کے بعد سے اسیر فدوى حمادہ کی تاحال کوئی خبر موصول نہیں ہوئی۔

واضح رہے کہ اسرائیل کی دو درجن جیلوں میں کم سے کم 5700 فلسطینی باقاعدہ پابند سلاسل ہیں، ان میں 40 خواتین، 500 انتظامی قید، 230 بچے، 1000 مریض شامل ہیں جن میں سے 700 کی زندگی خطرے میں ہے اور بنیادی انسانی حقوق سے محروم ہیں ۔

یہ بھی دیکھیں

طالبان نے سابق حکمرانوں سے برآمد لاکھوں ڈالر مرکزی بینک میں جمع کرا دیے

کابل: طالبان نے سابق حکومتی عہدیداروں سے برآمد ہونے والے ایک کروڑ 20 لاکھ امریکی …