پیر , 25 اکتوبر 2021

نائیجیریا کے صدر نے شیخ زکزاکی کے قتل کے لیے دسیوں لاکھ ڈالر حاصل کئے

سعودی عرب نائیجیریا کی تحریک اسلامی کے سربراہ علامہ شیخ ابراہیم زکزکی کے قتل کے درپے ہیں۔ یہ انکشاف شیخ زکزکی کے وکیل اسحاق آدم اسحاق نے کیا ہے۔

ابلاغ نیوز کی رپورٹ کے مطابق اسحاق آدم نے کہا ہے کہ نائیجیریا کے صدر محمدو بوہاری نے علامہ شیخ ابراہیم زکزکی کے قتل کے مقصد سے امریکہ، غاصب صیہونی ٹولے اور سعودی عرب سے دسیوں لاکھ ڈالر حاصل کئے ہیں۔

علامہ زکزکی کے وکیل کا کہنا تھا کہ انکی حالت بڑی تشویشناک ہو چکی ہے اور کسی قسم کی نئی معلومات شیخ زکزکی کے بارے میں موصول نہیں ہو پا رہی ہے اور وہ دوہزار پندرہ سے بدستور فوج کی نگرانی میں جیل میں قید ہیں۔

خیال رہے کہ 13 دسمبر 2015 کو نائیجیریا کی فوج نے علامہ زکزکی کے دینی مرکز پر حملہ کر کے وہاں موجود سیکڑوں افراد کو شہید و زخمی کر دیا تھا جن میں خود شیخ زکزکی کے تین بیٹے بھی شامل تھے جبکہ خود شیخ اور انکی اہلیہ کو زخمی حالت میں فوج اٹھا کر لے گئی تھی اور وہ تاحال جیل میں قید ہیں۔

نائیجیریا کی حکومت حتیٰ انہیں طبی سہولیات سے بھی محروم رکھے ہوئے ہے جس کے باعث انسانی حقوق کی تنظیمیں اب تک بارہا انکی تشویشناک جسمانی صورتحال کے بارے میں خبردار کرتے ہوئے غیر قانونی قید سے انکی فوری رہائی کا مطالبہ کر چکے ہیں۔

یہ بھی دیکھیں

لبنان کو ایرانی تیل کی ترسیل کا سلسلہ جاری

تہران: ایرانی ایندھن کا حامل ایک اور کاروان شام کے راستے لبنان میں داخل ہو …