جمعہ , 7 مئی 2021

میانمار مظاہرین کے جلوس جنازہ پر فوج کی فائرنگ

میانمار میں فوجی بغاوت کے خلاف مظاہروں اور مظاہرین پر فوج کی فائرنگ کا سلسلہ جاری ہے –

رائٹرز کی رپورٹ کے مطابق عینی شاہدین کا کہنا ہے کہ اتوار کو مظاہرین پر فوج کی فائرنگ میں ایک سو چودہ افراد ہلاک ہوگئے تھے ۔

فوج نے مہلوکین کے جلوس جنازہ کو بھی فائرنگ کا نشانہ بنایا۔اس فائرنگ میں کم سے کم تین افراد کی ہلاکت اور درجنوں کے زخمی ہونے کی خبر ہے۔

یہ ایسی حالت میں ہے کہ میانمار میں فوجی بغاوت کرنے والے فوجیوں کے سرغنہ جنرل من آنگ ہلائنگ نے دعوی کیا تھا کہ فوج ، ان لوگوں کی حفاظت کرے گی جو ڈیموکرسی کے لئے مظاہرے کر رہے ہیں۔

اقوام متحدہ نے مظاہرین پر بڑے پیمانے پر مہلک و منظم حملوں اور یکم فروری دوہزار اکیس کی فوجی بغاوت کے بعد سے انجام پانے والی انسانی حقوق کی تمام خلاف ورزیوں کی سخت مذمت کی ہے۔

سیاسی قیدیوں کی غیرسرکاری امدادی تنظیم کے اعداد و شمار کے مطابق یکم فروری کی فوجی بغاوت کے بعد سے اب تک کم سے کم چار سو تیئیس افراد ہلاک ہوچکے ہیں۔

فوجی بغاوت کے بعد سے میانمار میں ایمرجنسی نافذ ہے اور ملکی امور فوج کے ہاتھ میں ہیں۔

یہ بھی دیکھیں

ایران و چین معاہدے پر امریکہ چراغ پا

امریکی صدر نے ایران اور چین کے 25 سالہ معاہدے پر سخت تشویش کا اظہار …