اتوار , 17 اکتوبر 2021

’بمباری اس وقت تک جاری رہے گی جب تک ضرورت ہو گی‘ نتین یاہو

تل ابیب: اسرائیل کے وزیراعظم بنیامین نیتن یاہو نے کہا ہے کہ وہ ’بھرپور طاقت کے ساتھ راکٹ حملوں کا جواب‘ دیتے رہیں گے۔

ہفتہ کے روز ٹیلی ویژن پر اپنے خطاب میں نیتن یاہو نے کہا کہ بمباری اس وقت تک جاری رہے گی ’جب تک اس کی ضرورت ہو گی‘ تاہم انھوں نے زور دیا کہ شہری اموات کو کم کرنے کے لیے ہر ممکن کوشش کی جارہی ہے۔

نیتن یاہو نے یہ بھی کہا کہ ’اس محاذ آرائی کے ذمہ دار ہم نہیں بلکہ ہم پر حملہ کرنے والی جماعت ہے۔‘

اسرائیل اور فلسطین میں کشیدگی ساتویں روز میں داخل ہو گئی ہے اور فی الحال اس میں کمی کے کوئی آثار نظر نہیں آ رہے۔

اتوار کی صبح غزہ پر اسرائیل کی بمباری کے نتیجے میں مزید تین فلسطینی شہری شہید ہو گئے ہیں۔ فلسطین کے مطابق پیر سے جاری اس کشیدگی میں اب تک 148 فلسطینی شہری شہید ہو چکے ہیں جبکہ اسرائیل کے مطابق دو بچوں سمیت اس کے دس شہری ہلاک ہوئے ہیں۔

اسرائیل کا کہنا ہے کہ غزہ میں مرنے والے افراد میں سے درجنوں عسکریت پسند تھے جبکہ فلسطینی حکام کے مطابق مرنے والوں میں 41 بچے بھی شامل ہیں۔

اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل انتونیو گوتریس نے سنیچر کے روز غزہ میں شہریوں کی اموات اور بین الاقوامی میڈیا کے دفاتر پر حملے پر سخت مایوسی کا اظہار کیا ہے۔

انتونیو گوتریس کے ترجمان نے ایک بیان میں کہا ہے کہ غزہ کے الشاتی کیمپ میں اسرائیلی فضائی حملے کے نتیجے میں بچوں سمیت ایک ہی خاندان کے دس افراد کی اموات سمیت شہری اموات کی بڑھتی ہوئی تعداد پر سیکریٹری جنرل نے شدید افسوس کا اظہار کیا ہے۔

بیان میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ انتونیو گوتریس غزہ شہر میں اسرائیلی فضائی حملے کے نتیجے میں ہونے والی تباہی سے بہت پریشان ہوئے ہیں جس میں متعدد بین الاقوامی میڈیا کے دفتروں کے علاوہ رہائشی اپارٹمنٹس بھی موجود تھے۔

بیان کے مطابق سکریٹری جنرل نے تمام فریقوں کو یاد دلاتے ہوئے کہا ہے کہ عام شہریوں اور میڈیا کو نشانہ بنانا بین الاقوامی قانون کی خلاف ورزی ہے اور ہر قیمت پر اس سے گریز کرنا چاہیے۔

یہ بھی دیکھیں

ایرانی و ہندوستانی وزرائے خارجہ کی ملاقات، باہمی تعاون کے مزید فروغ کے لئے پر عزم

نیویارک: اسلامی جمہوریہ ایران اور ہندوستان کے وزرائے خارجہ کے درمیان اقوام متحدہ کی جنرل …