اتوار , 1 اگست 2021

ہیومن رائٹس واچ کا یو اے ای پر پاکستانیوں کو قید، ڈی پورٹ کرنے کا الزام

انسانی حقوق کی بین الاقوامی تنظیم ہیومن رائٹس واچ (ایچ آر ڈبلیو) نے متحدہ عرب امارات پر 4 پاکستانیوں کو گزشتہ برس اکتوبر سے لاپتا رکھنے کا الزام عائد کردیا۔

عالمی تنظیم کے مطابق دیگر 6 افراد کو اہلِ تشیع مکتبہ فکر سے تعلق رکھنے کی بنیاد پر ڈی پورٹ بھی کیا گیا۔

خبررساں ادارے رائٹرز کی رپورٹ کے مطابق انسانی حقوق کی تنظیم نے منگل کو شائع ہونے والی ایک رپورٹ میں بتایا کہ یہ 10 افراد برسوں سے یو اے ای میں بحیثیت منیجر، سیلز اسٹاف، چھوٹے کاروبار کے سربراہ، مزدوروں اور ڈرائیور کے طور پر کام کرتے تھے۔

اس سے قبل ہیومن رائٹس واچ نے کہا تھا کہ متحدہ عرب امارات کی جیلوں میں سیکڑوں ایکٹوسٹس، دانشور اور وکلا طویل سزائیں کاٹ رہے ہیں۔

تاہم یو اے ای کی جانب سے ان الزامات کو جھوٹا اور غیر مصدقہ قرار دیا گیا تھا۔

ایچ آر ڈبلیو کی رپورٹ میں کہا گیا کہ ‘یو اے ای حکام نے اکتوبر اور نومبر میں 6 افراد کو جبری طور پر لاپتا اور 3 ہفتوں سے 5 ماہ کی قید تنہائی کے بعد رہا کر کے فوری طور پر ڈی پورٹ کردیا تھا’۔

قید میں رہنے والے 4 افراد میں سے ایک نے 6 ماہ بعد اپنے اہلِ خانہ کو کال کی تھی ان کے اہلِ خانہ کو اب بھی یہ معلوم نہیں کہ انہیں حکام نے کہاں رکھا ہوا ہے اور انہیں قید کیوں کیا گیا۔

انسانی حقوق کی تنظیم کا کہنا تھا کہ انہوں نے مذکورہ خاندان کے اراکین سے بات کی تھی، جن کا کہنا تھا کہ وہ دیگر پاکستانی اہلِ تشیع مکتبہ فکر سے تعلق رکھنے والے افراد کو بھی جانتے تھے جنہیں یو اے ای حکام نے ستمبر سے وسط سے اٹھا رکھا ہے۔

ایچ آر ڈبلیو نے کہا کہ ‘عالمی کشیدگی میں اضافے کے وقت یو اے ای حکام کی جانب سے اہلِ تشیع رہائشیوں کو جان بوجھ کر نشانہ بنانے کی رپورٹس اکثر سامنے آتی ہیں چاہے وہ، لبنانی، عراقی، افغان، پاکستانی یا کوئی اور ہوں’۔

یہ بھی دیکھیں

جنگی علاقے میں داخل ہونے والا ہر صحافی ہمیں آگاہ کرے: طالبان ترجمان

کابل: طالبان ترجمان ذبیح اللہ مجاہد کا کہنا ہےکہ جنگی علاقے میں داخل ہونے والا …