پیر , 24 جنوری 2022

سعودی اتحاد کےجنگی طیاروں کی بمباری، سولہ یمنی شہری شہید

صنعا: سعودی اتحاد کی یمن پر جارحیت و بربریت کا سلسلہ بدستور جاری ہے۔

المسیرہ کی رپورٹ کے مطابق جارح سعودی اتحاد نے جمعہ کوصوبہ تعز کے "مقبنه” رہائشی علاقے پر حملے کئے۔ ان حملوں کے نتیجے میں 16 یمنی شہری شہید ہوئے جن میں بچے بھی شامل ہیں۔ جارح سعودی اتحاد کےجنگی طیاروں کی اس علاقے پر پروازوں کی وجہ سے ملبے تلے دب جانے والے شہداء کی لاشوں کو نکالا نہیں جا سکا۔

سعودی اتحاد کے آلۂ کاروں نے نومبر کے مہینے میں الحدیدہ میں 5933 بار جنگ بندی کی خلاف ورزی کرتے ہوئے مختلف علاقوں پر گولہ باری کی۔

نومبر کے مہینے میں یمن کے صوبے الحدیدہ پر جارح سعودی اتحاد کےجنگی طیاروں اور ڈرون نے پروازیں کیں، توپوں کے گولے اور میزائل داغے اور بھاری اور ہلکے ہتھیاروں سے حملے کر کے 5933 مرتبہ جنگ بندی کی خلاف ورزی کی۔

یمن کے خلاف جنگ اور جارحیت کا سلسلہ ایسے وقت میں جاری ہے جب سوئیڈن میں صنعاء اور ریاض کے وفد کے مابین 18 دسمبر 2018 کو الحدیدہ میں جنگ بندی کا معاہدہ طے پایا تاہم سعودی جنگی اتحاد نے اپنی ہی اعلان کردہ جنگ بندی کی ایک دن بھی پابندی نہیں کی۔

واضح رہے کہ سعودی عرب اور اس کے بعض اتحادی ممالک، امریکہ اور دیگر مغربی ملکوں کی حمایت کے زیر سایہ مارچ دو ہزار پندرہ سے یمن پر وحشیانہ حملے کر رہے ہیں اس عرصے میں دسیوں ہزار یمنی شہری شہید و زخمی جبکہ دسیوں لاکھ یمنی بے سر و سامانی کی زندگی گزارنے پر مجبور ہو گئے ہیں۔

سعودی عرب اپنے تمام تر وحشیانہ حملوں کے باوجود اپنا ایک بھی مقصد اب تک حاصل نہیں کر سکا ہے-

یہ بھی دیکھیں

ترکی اور اسرائیل کے وزرائے خارجہ کے مابین باضابطہ گفتگو

انقرہ: ترکی اور اسرائیل کے وزرائے خارجہ کے مابین ٹیلی فونی گفتگو ہوئی ہے۔ ترکی …