پیر , 26 ستمبر 2022

لاپتہ افراد کيس: موثر تحقیقات میں ناکامی پر حکومت سے وضاحت طلب


اسلام آباد ہائيکورٹ نے لاپتہ افراد کيس ميں حکومت کو پرویز مشرف اور ان کے بعد تمام وزرائے اعظم کو نوٹسز جاری کرنے کا حکم ديديا۔

اسلام آباد ہائی کورٹ نے صحافی مدثر نارو سمیت 6 لاپتہ افراد کو 17 جون کو عدالت پیش کرنے کا حکم جاری کر دیا جبکہ لاپتہ افراد کو پیش نہ کرنے یا موثر تحقیقات میں ناکامی پر حکومت سے وضاحت طلب کرلیا۔

اسلام آباد ہائیکورٹ کے چیف جسٹس اطہر من اللہ نے حکم نامہ جاری کردیا۔ عدالت کا کہنا تھا کہ بیان حلفی جمع کرائیں کیوں نہ آئین سے مبينہ انحراف کی کارروائی شروع کی جائے۔ ہرچیف ایگزیکٹو وضاحت کرے کہ کیوں نہ سنگین غداری جرم کے تحت کارروائی کی جائے۔

عدالت کا کہنا ہے کہ سیکريٹری داخلہ عدالتی حکم کی نقل وزیراعظم اور وفاقی کابینہ کے سامنے رکھیں، وزرائے داخلہ بتائیں کہ غیرذمہ داری پر ان پر بھاری جرمانے کیوں نہ عائد کئے جائیں۔ لاپتہ افراد کی عدم بازیابی کی صورت میں موجودہ اور سابق وزرائےداخلہ پیش ہوں۔

فیصلہ میں کہا گیا ہے کہ جبری گمشدگیوں کی غیراعلانیہ پالیسی سے سلامتی کو خطرے میں کیوں ڈالاگیا؟ غیراعلانیہ پالیسی کے تحت جبری گمشدگیوں کی اجازت کیوں دی گئی؟ حکومت عدالتی معاون آمنہ مسعودجنجوعہ کی تجاویز کو زیر غور لاکر رپورٹ پیش کرے۔

چیف جسٹس اطہر من اللہ کا کہنا تھا کہ اٹارنی جنرل مطمئن کریں مستقبل میں جبری گمشدگی نہیں ہوگی، وفاقی حکومت لاپتہ افراد کے خاندان کو مشکلات سے آگاہ کرنے کیلئے اقدامات کرے۔

یہ بھی دیکھیں

سینیٹ کی رکنیت کا حلف اٹھانے کے بعد اسحاق ڈار بطور وزیر خزانہ حلف اٹھائیں گے

اسلام آباد: لندن میں مسلم لیگ (ن) کے قائد نواز شریف اور وزیراعظم شہباز شریف …