بدھ , 10 اگست 2022
تازہ ترین

’ایک معتبر شخصیت کے پاس گیا تھا، انہیں بتایا تسلسل نہ دینے سے معیشت بکھر جائے گی‘

سابق وزیر خزانہ اور پاکستان تحریک انصاف کے سینیٹر شوکت ترین کا کہنا ہے رواں برس مارچ میں ایک معتبر شخصیت کے پاس گیا، انہیں بتایا کہ معیشت بڑھ رہی ہے، تسلسل نہیں دیں گے تو معیشت بکھر جائے گی۔

چیئرمین صادق سنجرانی کی زیر صدارت ہونے والے سینیٹ اجلاس میں اظہار خیال کرتے ہوئے شوکت ترین کا کہنا تھا پی ٹی آئی کی حکومت تو پہلی مرتبہ آئی تھی، جومعیشت ملی اس کی وجہ سے ہم آئی ایم ایف کے پاس گئے، میں نے آئی ایم ایف کو کہا کہ بجلی کے نرخ بڑھیں گے اور نہ 700 ارب روپے کے ٹیکسز لگیں گے۔

انہوں نے کہا کہ ہم 6 ماہ آئی ایم ایف کے سامنے کھڑے رہے لیکن موجودہ حکومت آئی ایم ایف کی شرائط کی وجہ سے قیمتیں بڑھا رہی ہے۔

پی ٹی آئی سینیٹر نے کہا کہ ہم روس سے معاہدے کرتے اور سستا تیل لیتے، ہماری ریفائنری کے ڈیزل کا مارجن 14 روپے تھا جو ان کی حکومت میں 70 روپے ہو چکا ہے۔

سینیٹر شوکت ترین نے کہا کہ آئی ایم ایف نے ان کو ڈنڈے مارنے شروع کر دیے، یہ حکومت عوام کے مفاد میں ایسے کھڑی نہیں ہوئی جیسے ہم کھڑے ہوئے۔

ان کا کہنا تھا میں مارچ میں ایک معتبر شخصیت کے پاس گیا تھا، میں نے کہا تھا کہ معیشت بڑھ رہی ہے، تسلسل نہیں دیں گے تو معیشت بکھر جائے گی۔

پاکستان تحریک انصاف کے سینیٹر شوکت ترین نے مطالبہ کیا کہ موجودہ حکومت استعفیٰ دے اور فوری الیکشن کرائے

یہ بھی دیکھیں

بھارت بارشوں اور سیلاب سے ہلاکتوں کی تعداد 73 ہوگئی

نئی دہلی: بھارتی ریاست کرناٹک میں موسلادھار بارشوں اور سیلاب سے ہونے والی ہلاکتوں کی …