اتوار , 25 ستمبر 2022

آصف زرداری اگلی حکومت بنانے کیلئے پُر امید

رہنما پاکستان پیپلز پارٹی اور سابق صدر آصف علی زرداری نے دعویٰ کیا ہے کہ عام انتخابات 2023 میں کامیابی کے بعد آئندہ وفاقی حکومت ان کی جماعت کی بلاول ہاؤس میں پارٹی کے عہدیداران اور کارکنان سے خطاب میں سابق صدر کا کہنا تھا کہ ’ مرکز میں آئندہ حکومت پیپلز پارٹی کی ہوگی‘۔ْ

انہوں نے کہا کہ میں وعدہ کرتا ہوں کہ اگر مجھے دوبارہ اقتدار میں آنے کا موقع ملا تو میں پاکستان میں 110 درجے کارکردگی کا مظاہرہ کروں گا۔

ان کا کہنا تھا کہ پاکستان پیپلز پارٹی کے پاس ملک کو درپیش تمام چیلنجز سے نمٹنے کی صلاحیت موجود ہے۔

پنجاب میں پارٹی کی سیاست کے حوالے سے آصف زرداری نے اس تاثر کو ختم کیا کہ گلگت بلتستان اور پنجاب سے پیپلزپارٹی ختم ہوچکی ہے۔

انہوں نے کہا کہ یہ بات سچ نہیں ہے پاکستان پیپلز پارٹی کو ’پاکستان کی بقا‘ کے لیے اپنی سیاست کی قربانی دینی پڑی، میں پنجاب میں بذاتِ خود پارٹی کے معاملات دیکھ رہا ہوں اور یہاں پارٹی کی بحالی یقینی بناؤں گا۔

آصف علی زرداری نے دعویٰ کیا کہ پاکستان پیپلز پارٹی مسلم لیگ (ن) کی زیر قیادت مخلوط وفاقی اور پنجاب میں صوبائی حکومت کی نو اتحادی جماعتوں میں سے ایک ہے، یہ ملک کو معاشی اور سیاسی بحران سے نکالنے میں مدد کرے گی۔

تاہم انہوں نے پنجاب میں اگلے ماہ ہونے والے ضمنی انتخابات کے معاہدے کے برعکس مسلم لیگ (ن) کے ساتھ اگلے عام انتخابات لڑنے کا ذکر نہیں کیا-

انہوں نے کہا کہ ہم پنجاب میں اپنی پارٹی کو مضبوط کریں گے اور صوبے میں ہمارا منصفانہ حصہ یقینی بنائیں گے۔

’ایک زرداری سب پہ بھری‘ کے نعروں کی گونج میں پیپلز پارٹی کے سینئر رہنما نے مزید کہا کہ وہ پارٹی کارکنوں کا احترام کرتے ہیں اور مستقبل کے کسی بھی فیصلے میں ان سے مشاورت کریں گے۔

انہوں نے اعلان کیا کہ ’کارکنوں کے لیے بحریہ ٹاؤن تک پہنچنا بہت مشکل ہے، کیونکہ یہ مرکزی شہر سے بہت دور ہے، اس لیے میں نے ان کے ساتھ بات چیت کو برقرار رکھنے کے لیے گلبرگ (شہر کے مرکز) میں مکان لینے کا فیصلہ کیا ہے‘۔

آصف زرداری نے سابق وزیر اعظم عمران خان پر بھی تنقید کرتے ہوئے کہا کہ ’انوکھا لاڈلہ‘ (جو طاقتوں کا پسندیدہ ہے) کی پالیسیاں ملک میں قیمتوں میں اضافے اور مہنگائی کا باعث بنی ہیں۔

مسلم لیگ (ن) کے حوالے سے سابق صدر نے کہا کہ ’وہ (شریف) ہماری بات صرف اس وقت سنتے ہیں جب انہیں ہماری ضرورت ہو‘۔

ملاقات میں اسلم گل، فیصل میر، ثمینہ گھرکی، عزیز الرحمٰن چن، تنویر اشرف کائرہ اور فاروق سعید سمیت پیپلز پارٹی کی صوبائی قیادت بھی موجود تھی جہاں آصف زرداری نے اشرف بارا کو پارٹی میں خوش آمدید کہا۔

سابق صدر بعد ازاں نوابشاہ روانہ ہو گئے اور اگلے ہفتے ان کی واپسی متوقع ہے جب وہ پنجاب میں اپنی پارٹی کے حصے کے حوالے سے مسلم لیگ ن کی قیادت سے ملاقاتیں کریں گے۔

قبل ازیں، پیپلز پارٹی کے پنجاب چیپٹر نے آصف زرداری سے شکایت کی تھی کہ وزیر اعلیٰ شہباز شریف کے صاحبزادے حمزہ شہباز صوبے میں اپنے قانون سازوں کو ان کا ‘متفقہ حصہ’ دینے سے گریزاں ہیں۔

پیپلز پارٹی کی پنجاب اسمبلی میں 7 نشستیں ہیں اور مبینہ طور پر شریفوں نے انہیں 4 وزارتوں اور دو مشیروں کا وعدہ کیا تھا۔

پیپلز پارٹی فنانس، کمیونیکیشن اور ورکس کے محکموں میں دلچسپی رکھتی ہے لیکن مسلم لیگ (ن) کے حلقوں کا خیال ہے کہ ایسی اہم سیٹیں پارٹی کے اندر ہی رہنی چاہئیں۔

حمزہ شہباز کی موجودہ 8 رکنی کابینہ میں پیپلز پارٹی کے دو اراکین ہیں تاہم وہ محکموں کی تقسیم نہ ہونے کی وجہ سے اجلاسوں میں غیر فعال رہتے ہیں۔

دو ہفتے قبل کابینہ میں ان کی شمولیت کے باوجود، تمام اراکین کو قلمدان تفویض نہیں کیے گئے ہیں، مسلم لیگ (ن) کابینہ میں توسیع کے حوالے سے فیصلہ کن نہیں دکھائی دے رہی۔

مسلم لیگ (ن) اور پیپلز پارٹی نے اگلے ماہ پنجاب کی 20 صوبائی نشستوں پر ہونے والے ضمنی انتخابات میں عمران خان کی جماعت پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے خلاف مشترکہ طور پر الیکشن لڑنے پر اتفاق کیا ہے۔

تاہم پارٹیوں کے درمیان نظریاتی اختلافات کی وجہ سے ان کے کارکنان ابھی تک میدان میں اترتے نہ ہی ان حلقوں میں اپنے مشترکہ امیدواروں کے لیے انتخابی مہم چلاتے نظر آئے ہیں۔

الیکشن کمیشن کی جانب سے پی ٹی آئی کے 25 قانون سازوں کو وزیراعلیٰ کے انتخاب میں انحراف پر ڈی سیٹ کرنے کے بعد حمزہ شہباز پنجاب اسمبلی میں اکثریت کھو بیٹھے، جس کے بعد وہ ضمنی انتخابات میں مسلم لیگ (ن) اور پیپلز پارٹی کے حمایت یافتہ امیدواروں کو جیتنے کے لیے بے چین ہیں تاکہ اپنے عہدے کو برقرار رکھ سکیں۔

مسلم لیگ (ن) نے عمران خان سے الگ ہونے کی ’قربانی‘ کے عوض پی ٹی آئی کے 20 منحرف افراد میں سے بیشتر کو ٹکٹ دیے ہیں۔

پارٹی کے ایک اندرونی نے ڈان کو بتایا کہ ’حمزہ شہباز نے اپنی کزن مریم نواز سے بھی درخواست کی ہے کہ وہ ان امیدواروں کے لیے مہم چلائیں تاکہ وہ اسمبلی میں واپس آسکیں، خیال رہے پی ٹی آئی انہیں ٹرن کوٹ کہتی ہے۔

یہ بھی دیکھیں

سینیٹ کی رکنیت کا حلف اٹھانے کے بعد اسحاق ڈار بطور وزیر خزانہ حلف اٹھائیں گے

اسلام آباد: لندن میں مسلم لیگ (ن) کے قائد نواز شریف اور وزیراعظم شہباز شریف …