جمعہ , 7 اکتوبر 2022

سعودی اتحاد نے ایک بار پھر یمنی پٹرولیم کے جہاز کو قبضے میں لے لیا

یمن کی قومی مذاکرات کمیٹی کے سربراہ کا تاکید کے ساتھ کہنا تھا کہ سعودی اتحاد کیجانب سے معاہدے کی مسلسل خلاف ورزیوں، جس میں پروازوں اور بحری جہازوں کو روکنا اور اسی طرح جاسوس ڈرونز کی یمنی علاقوں پر پرواز ایسے منفی اقدامات ہیں جو جنگ بندی برقرار رکھنے کے اقدامات کی نفی کرتے ہیں۔
یمن کی آئل کمپنی کے سرکاری ترجمان نے یمن کے ایندھن کے جہاز کے پکڑے جانے کی خبر دیتے ہوئے کہا ہے کہ چوبیس گھنٹے کے دوران سعودی جارحیت کا یہ دوسرا واقعہ ہے۔ یمن آئل ریگولیٹری اتھارٹی کے ترجمان ”عصام المتوکل” نے کہا ہے کہ جارح سعودی اتحاد نے جنگ بندی کی خلاف ورزی کرتے ہوئے 30,148 ٹن پٹرول لے جانے والے بحری جہاز کو روک لیا ہے۔ ان کے مطابق، اقوام متحدہ سے حاصل کئے گئے داخلے کے اجازت نامے کے باوجود جارح سعودی اتحاد نے مذکورہ بحری جہاز کو الحدیدہ بندرگاہ میں داخلے سے روک دیا ہے۔ یاد رہے کہ سعودی اتحاد نے گذشتہ روز بھی 23,920 ٹن پٹرول لے جانے والے جہاز ”برنسیس حلیمه” کو قبضے میں لے لیا تھا۔

قابل غور بات یہ ہے کہ ان بحری جہازوں کو ایسے وقت میں حراست میں لیا گیا ہے، جب یمن میں اقوام متحدہ کی زیر نگرانی انسانی ہمدردی اور فوجی بنیادوں پر جنگ بندی کے بعد پیٹرولیم مصنوعات لے جانے والے بحری جہازوں کو الحدیدہ بندرگاہ میں داخلے کی اجازت دی گئی ہے۔ اسی سلسلے میں یمن کی قومی مذاکرات کمیٹی کے سربراہ ”محمد عبدالسلام” نے تاکید کے ساتھ کہا کہ سعودی اتحاد کی جانب سے معاہدے کی مسلسل خلاف ورزیوں، جس میں پروازوں اور بحری جہازوں کو روکنا اور اسی طرح جاسوس ڈرونز کی یمنی علاقوں پر پرواز ایسے منفی اقدامات ہیں، جو جنگ بندی برقرار رکھنے کے اقدامات کی نفی کرتے ہیں

یہ بھی دیکھیں

مزاحمتی فرنٹ مغربی کنارے سے لے کر پورے فلسطین تک پھیلے گی: حماس

مقبوضہ بیت المقدس: مقبوضہ بیت المقدس شہر میں فلسطینی اسلامی مزاحمتی تحریک (حماس) کے ترجمان …