جمعہ , 7 اکتوبر 2022

کراچی: بجلی کی بندش کیخلاف شہریوں کا احتجاج، ماڑی پور روڈ میدان جنگ بن گیا

بجلی کی بندش کے خلاف کراچی کے علاقے ماڑی پور روڈ پر احتجاج کرنے والے شہریوں پر پولیس نےلاٹھیاں برسائیں اور شیلنگ کی۔

بجلی کی بندش پرگزشتہ روز سے ماڑی پور روڈ پر خواتین اور بچوں سمیت علاقہ مکین سراپا احتجاج ہیں،ماڑی پور روڈ 20 گھنٹوں سے ٹریفک کے لیے بند ہے۔

انتظامیہ سے مذاکرات ناکام ہونے پر مظاہرین نے پولیس پر پتھراؤ کیا اور بجلی کی فراہمی تک احتجاج ختم کرنےسے انکار کردیا۔

پتھراؤ کے بعد پولیس نے مظاہرین پر لاٹھی چارج اور شیلنگ کی،مظاہرین کو منتشر کرنے کے لیے پولیس نے ہوائی فائرنگ بھی کی۔

مظاہرین کے پتھراؤ سے ایک پولیس اہلکار زخمی ہوگیا جب کہ پولیس نے 4 افراد کو گرفتارکرلیا۔

اے ایس پی عاطف امین کا کہنا ہے کہ ماڑی پور روڈ حب چوکی سے شہر کو جوڑنے والی مرکزی سڑک ہے، صبح 4 بجے بھی میں نے مظاہرین سے مذاکرات کی کوشش کی، مظاہرین کے مطالبے پرکے الیکٹرک سے تحریری معاہدہ بھی کروایا گیا، جب معاملات طے پاگئے تو مظاہرین میں دھڑے بن گئے۔

اے ایس پی کا کہنا ہےکہ ٹریفک میں پھنسے لوگوں سے کچھ افراد نے لوٹ مار بھی کی، لوٹ مار کے دوران ٹرکوں کی چابیاں بھی نکال لی گئیں، امن و امان کی صورت حال خراب ہونے پر مظاہرین کو پیچھے دھکیلا، بجلی بحال کی جاچکی ہے، مظاہرین مظاہرہ ختم کریں۔

احتجاج کے باعث ملحقہ علاقوں کیماڑی، نیٹی جیٹی پل، ایم ٹی خان روڈ، آئی سی آئی برج پر ٹریفک جام ہوگیا۔

آئی سی آئی برج سے لیاری ایکسپریس وے، ماڑی پور اور سائٹ ایریا جانے والا ٹریفک معطل ہوگیا،گاڑیوں کی قطاریں لگ گئیں،مظاہرے سے طلبہ بھی متاثر ہوئے اور روڈ بلاک ہونےکے باعث کئی طالب علم امتحانات دینے نہ جاسکے۔

خیال رہے کہ گرمی بڑھتے ہی بجلی کی طویل اور غیر اعلانیہ لوڈ شیڈنگ میں بھی اضافہ ہوگیا، این ٹی ڈی سی ذرائع کے مطابق ملک میں بجلی کی پیداوار 22 ہزار 500 میگاواٹ کے لگ بھگ اور طلب 28 ہزار میگاواٹ سے تجاوز کرگئی ہے، اس طرح بجلی کا شارٹ فال 5 ہزار 500 میگاواٹ ہوگیا ۔

کراچی کے علاقے گڈاپ سٹی میں بجلی کی لوڈشیڈنگ کا دورانیہ 18 گھنٹے تک بڑھ گیا ہے، اس کے علاوہ شاہ فیصل کالونی، ملیر، سرجانی ٹاؤن، جہانگیر روڈ، گلستان جوہر، گارڈن، سلطان آباد، کالا پل سمیت شہر کے مختلف علاقوں میں بجلی کی طویل اور غیر اعلانیہ لوڈ شیڈنگ کا سلسلہ جاری ہے اور شہر کے اکثر علاقوں میں لوڈشیڈنگ کا دورانیہ 4 سے 14 گھنٹے تک پہنچ گیا ہے۔

گزشتہ روز بھی تین ہٹی، صدر پریڈی اسٹریٹ، جوبلی مارکیٹ ، شاہ فیصل کالونی ، سرجانی ٹاؤن یونیورسٹی روڈ،کالا پل، ایم ٹی خان روڈ، نشتر روڈ اور ماڑی پور سمیت 14 مقامات پر احتجاج کیا گیا۔

دوسری جانب ترجمان کے الیکٹرک کے مطابق کے الیکٹرک نے کراچی کے بیشتر علاقوں میں غیرقانونی کنڈوں کے خلاف کارروائی کی ہے، جس کے نتیجے میں ‏صدر، لیاقت آباد، ناظم آباد، گارڈن، بہادر آباد، ٹیپو سلطان کے علاقوں میں 1397کلو سے زائدکنڈا کنکشنز کی تاروں کو ہٹایا گیا ہے۔

اس کے علاوہ پنجاب کےمختلف شہروں میں بھی 6 سے8 گھنٹے کی لوڈشیڈنگ جاری ہے جب کہ دیہات میں بجلی چندگھنٹے ہی آتی ہے۔

یہ بھی دیکھیں

پاکستان میں غربت کی شرح میں 2.5 فیصد سے 4 فیصد اضافے کا خدشہ،رپورٹ

لندن:عالمی بینک نے سیلاب سے پاکستانی معیشت کو 40 ارب ڈالر تک نقصانات کا تخمینہ …