بدھ , 10 اگست 2022
تازہ ترین

روس سے تیل کی درآمد میں فائدے سے زیادہ نقصانات

تیل کی لاگت کم کرنے کے لیے روس سے تیل کی درآمدات ممکنہ طور پر عملی جامہ نہ پہن سکے کیوں کہ اس کے منفی اثرات فائدوں پر بھاری اور ماسکو کی عدم دلچسپی کا عنصر بھی موجود ہے۔

رپورٹ کے مطابق ذرائع نے بتایا کہ تمام ریفائنریز میں معمولی تبدیلیوں کے ساتھ روسی خام گریڈز کو پراسس کرنے کے لیے 30 سے 35 فیصد تک تکنیکی صلاحیت موجود ہے۔

تاہم کوئی پاکستانی ریفائنری کسی بھی گریڈ کے روسی خام تیل کو 100 فیصد نہیں سنبھال سکتی، اس کا سادہ سا مطلب یہ ہے کہ روس سے درآمدات تیل کے ذرائع کو متنوع بنانے میں مدد کر سکتی ہے۔
جب عالمی سطح پر تیل کی بڑھتی ہوئی قیمتوں نے معیشت کے تمام پہلوؤں کو متاثر کیا تو سابق وزیر اعظم عمران خان نے روس سے رعایتی نرخ پر خام تیل کی خریداری کا خیال پیش کیا تھا۔

تاہم جب موجودہ اتحادی حکومت اقتدار میں آئی تو وزیر خزانہ مفتاح اسمٰعیل نے دعویٰ کیا کہ روس نے گزشتہ حکومت کی جانب سے کی گئی اس پیشکش کا جواب نہیں دیا تھا۔

تاہم خطے کی موجودہ سیاسی صورتحال کے تناظر میں مالیاتی انتظام سب سے بڑی مشکل ہے۔

درحقیقت بڑی ریفائنریز میں سے ایک نے حال ہی میں روس سے خام تیل کے کارگوز منگوائے تھے لیکن یہ تھرڈ پارٹی معاہدے کے ذریعے کیا گیا تھا جس کا مطلب یہ کہ کسی نجی تاجر نے پاکستانی ریفائنری کو مختلف پورٹس پر تیل فراہم کیا ہوگا اور یوں ادائیگی کسی روسی ادارے کو نہیں جائے گی۔
تاہم صنعت کے ایک سینئر ایگزیکٹو نے کہا کہ بڑے پیمانے پر اس قسم کے انتظامات پائیدار نہیں ہیں۔

یہ ایک بہت بڑا مسئلہ ہے کیونکہ پاکستانی درآمد کنندگان جو غیر ملکی زرِمبادلہ کے کم ہوتے ذخائر اور ملک کے خطرے کے شکار پروفائل کے باعث عمومی لیٹر آف کریڈٹ (ایل سیز) کا انتظام کرنے کے لیے جدو جہد کر رہے ہیں انہیں یہ فیصلہ لینے کے لیے کوئی مالی حمایت حاصل نہیں ہے۔

بڑے پاکستانی بینکس مثلاً نیشنل بینک آف پاکستان اور حبیب بینک موجودہ صورتحال میں یہ خطرہ مول نہیں لے سکتے کیونکہ ان کے زیادہ تر آپریشنز مغربی ممالک کے ساتھ وابستہ ہیں۔

البتہ نسبتاً چھوٹے بینکس مثلاً فیصل، میزان، حبیب میٹرو جن میں مشرق وسطیٰ اور سوئس حصص دار ہیں وہ اس قسم کے انتظامات کی جانب جاسکتے ہیں لیکن اس کے بعد پاکستان میں مضبوط سیاسی عزم اور اس سے زیادہ روس کا مضبوط وعدہ درکار ہوگا۔
متعدد ریفائننگ ماہرین نے اس بات پر اتفاق کیا کہ حکومت، روسی تیل کی درآمدات کے آپشن پر غور کر رہی ہے لیکن یہ درآمدات میں حقیقی دلچسپی سے زیادہ دکھاوا تھا کیونکہ اتحادی حکومت کا جھکاؤ روس سے زیادہ مغرب کی جانب ہے۔

ذرائع نے کہا کہ حال ہی میں وزارت خارجہ میں توانائی کی درآمدات بالخصوص روس سے خام تیل کی درآمد پر غور کیا گیا تھا لیکن کوئی حتمی سمت اختیار نہیں کی گئی۔

اجلاس میں ہوئی بات چیت کی بنیاد پر وزارت توانائی اور اس کی چاروں ریفائنریز کو کہا گیا تھا کہ روس سے خام تیل کی درآمدات پر تجزیہ اور رائے پیش کریں۔

یہ بھی دیکھیں

بھارت بارشوں اور سیلاب سے ہلاکتوں کی تعداد 73 ہوگئی

نئی دہلی: بھارتی ریاست کرناٹک میں موسلادھار بارشوں اور سیلاب سے ہونے والی ہلاکتوں کی …