جمعہ , 7 اکتوبر 2022

درآمدات میں اضافے کے باعث ملک کا تجارتی خسارہ تاریخ کی بلند ترین سطح پر پہنچ گیا

پاکستان کا تجارتی خسارہ ایک سال پہلے کے 30 ارب 96 کروڑ ڈالر کے مقابلے میں 30 جون کو ختم ہونے والے مالی سال میں 48 ارب 66 کروڑ ڈالر کی بلند ترین سطح پر پہنچ گیا، جو توقع سے زیادہ درآمدات کی وجہ سے 57 فیصد اضافے کی نشاندہی کرتا ہے۔

مئی میں 800 سے زائد اشیا کی درآمدات پر پابندی کے باوجود تجارتی خسارہ خطرناک حد تک پہنچ گیا۔

بڑھے ہوئے تجارتی فرق کے خلاف اتحادی حکومت کی کوششیں مطلوبہ نتائج فراہم کرنے میں ناکام رہی ہیں جو کہ ایک سال پہلے کے 3 ارب 66 کروڑ ڈالر کے مقابلے میں جون کے دوران 32.3 فیصد بڑھ کر 4 ارب 84 کروڑ ڈالر تک پہنچ گیا جس کی بڑی وجہ برآمدات کے مقابلے درآمدات میں تقریباً دگنا اضافہ تھا۔

یوں ختم ہونے والے مالی سال کا تجارتی خسارہ سال 18-2017 کے 37 ارب ڈالر سے تجاوز کر گیا ہے، جس کی وجہ پاک چین اقتصادی راہداری سے متعلق درآمدات سے تھی۔

اس کے بعد کے برسوں میں تجارتی فرق 19-2018 میں 31 ارب 80 کروڑ ڈالر مالی سال 20-2019 میں 23 ارب 20 کروڑ ڈالر تک گر گیا تھا اور اس کے بعد مالی سال 21-2020 میں 30 ارب 80 کروڑ ڈالر رہا جبکہ سال 22-2021 میں مجموعی طور پر 48 ارب 66 کروڑ 40 لاکھ ڈالر تک پہنچ گیا۔

ختم ہونے والے مالی سال کے تجارتی خسارے کو بین الاقوامی منڈی میں تیل اور اشیا کی قیمتوں میں اب تک کے سب سے زیادہ اضافے نے بڑھایا۔

عالمی سطح پر اجناس کی قیمتیں بڑھنے کی باعث درآمدات میں غیر معمولی اضافے کی وجہ سے تجارتی خسارہ بڑھ رہا ہے جبکہ برآمدات تقریباً ڈھائی ارب ڈالر سے 2 ارب 80 کروڑ ڈالر ماہانہ پر رک گئی ہیں جو زیادہ تر نیم تیار شدہ مصنوعات اور خام مال کی ہیں۔

مئی میں تجارتی خسارہ 4 ارب 4 کروڑ ڈالر اور اپریل میں 3 ارب 78 کروڑ ڈالر رہا، جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ جب سابق وزیراعظم عمران خان کو اپریل میں پارلیمنٹ میں عدم اعتماد کے ووٹ کے ذریعے معزول کیا گیا تو ماہانہ خسارے میں کوئی کمی نہیں آئی۔

درآمدی بل میں اضافہ
دوسری جانب درآمدی بل 22-2021 کے دوران 43.45 فیصد بڑھ کر 80 ارب 51 کروڑ ڈالر ہوگیا جو ایک سال قبل 56 ارب 12 کروڑ ڈالر تھا۔

صرف جون میں درآمدی بل گزشتہ سال کے اسی مہینے کے 6 ارب 28 کروڑ ڈالر کے مقابلے میں بڑھ کر 7 ارب 74 کروڑ ڈالر تک پہنچ گیا، جو 23.26 فیصد کے اضافے کو ظاہر کرتا ہے۔

جون کے دوران ماہانہ درآمدات میں 14.32 فیصد اضافہ ہوا، مئی میں درآمدی بل 6 ارب 77 کروڑ ڈالر ریکارڈ کیا گیا تھا جبکہ اپریل میں یہ 6 ارب 67 کروڑ ڈالر رہا۔

حکومت نے 19 مئی کو تقریباً 800 لگژری اور غیر ضروری اشیا کی درآمد پر پابندی عائد کر دی تھی۔

پاکستان اقتصادی سروے 22-2021 کے مطابق اشیا کے تمام بڑے گروپوں کی درآمدات میں اضافہ ریکارڈ کیا گیا، زیر جائزہ مدت کے دوران درآمدات میں زبردست اضافے میں متعدد عوامل نے بالخصوص عالمی سطح پر اجناس کی بڑھتی ہوئی قیمتوں نے اہم کردار ادا کیا۔

درآمدات پر متفرق اعداد و شمار بتاتے ہیں کہ توانائی گروپ درآمدات میں اضافے کا سب سے بڑا ذریعہ ہے جو اس عرصے کے دوران درآمدات میں سالانہ اضافے کا ایک تہائی حصہ ہے۔

اسی طرح پاکستان میں درآمد کی جانے والی نان انرجی کموڈٹیز، جیسے خوردنی تیل (پام اور سویا بین)، چینی، چائے، کھاد اور اسٹیل پر بھی قیمتوں کی وجہ سے دباؤ دیکھا گیا۔

برآمدات میں اضافہ
ملک میں پہلی مرتبہ نہ صرف برآمدات کا ہدف حاصل کیا گیا بلکہ یہ 30 ارب ڈالر کی نفسیاتی رکاوٹ کو بھی عبور کر گیا، اس سے قبل پاکستان کی برآمدات گزشتہ ایک دہائی کے دوران اس سطح سے نیچے رہیں۔

پاکستان کی برآمدات حال ہی میں ختم ہونے والے مالی سال میں 26.6 فیصد بڑھ کر 31 ارب 84 کروڑ 50 لاکھ ڈالر تک پہنچ گئیں، جو کہ ایک سال قبل 25 ارب 16 کروڑ ڈالر تھیں۔

اسی طرح جون میں برآمدات گزشتہ سال کے 2 ارب 75 کروڑ ڈالر سے 6.48 فیصد بڑھ کر 2 ارب 89 کروڑ ڈالر ہو گئیں.

مالی سال 21-2020 میں برآمدات 18 فیصد بڑھ کر 25 ارب 30 کروڑ تک پہنچ گئیں، جو اس سے پہلے والے سال کے 21 ارب 40 کروڑ ڈالر سے زیادہ تھیں۔

حکومت نے ختم ہونے والے مالی سال میں، اجناس کے لیے سالانہ برآمدی ہدف 31 ارب 20 کروڑ ڈالر اور خدمات کے لیے ساڑھے 7 ارب ڈالر کا تخمینہ لگایا تھا۔

ایک سرکاری رپورٹ کے مطابق برآمدات میں تقریباً دو تہائی اضافہ ٹیکسٹائل سیکٹر خاص طور پر ہائی ویلیو ایڈڈ شعبے سے ہوا

یہ بھی دیکھیں

بلاول بھٹو کا صدر مملکت کیخلاف مواخذے کی کارروائی جلد شروع کرنے کا مطالبہ

چیئرمین پیپلزپارٹی بلاول بھٹو زرداری نے صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی کیخلاف مواخذے کی کارروائی …