ہفتہ , 1 اکتوبر 2022

مذاکرات میں ایران کے خلاف قرارداد پیش کرنے کی تجویز غیرذمہ دارانہ تھی: صدر رئیسی

ایرانی صدر مملکت نے کہا ہے کہ امریکہ کو مذاکرات اور معاہدے کے تقاضوں پر عمل کرنے کا فیصلہ کرنا چاہئے، مذاکرات کے دوران ایران کے خلاف قرارداد پیش کرنے کی تجویز مذاکرات اور معاہدے کی روح کی خلاف ورزی ہے۔

یہ بات علامہ سید ابراہیم رئیسی نے پیر کے روز سوئٹزرلینڈ کی نئی سفیر کے ساتھ ایک ملاقات کے دوران گفتگو کرتے ہوئے کہی۔

اس موقع پر سوئٹزرلینڈ کی سفیر نادین اولیویری لوزانو نے صدر رئیسی کو اپنی اسناد تقرری پیش کی۔

انہوں نے دونوں ممالک کے درمیان دیرینہ 100 سالہ تعلقات کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران تمام ممالک بالخصوص سوئٹزرلینڈ کے ساتھ تجارتی، اقتصادی اور سیاسی تعلقات بڑھانے کا خواہاں ہے۔

صدر رئیسی نے تہران میں سوئس سفارت خانے کے سفارت کاری کردار کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ امریکہ اور یورپی ممالک ایران کے سامنے اسٹریٹجک غلطیوں کا شکار ہیں اور ہمیں امید ہے کہ آپ ایران کے حقائق کو متعلقہ حکومت اور دیگر ممالک تک پہنچائیں گے تاکہ وہ سمجھیں کہ ایران دشمنی کے باوجود ترقی کر رہی ہے، جاری ہے اور ان کی تسلط پسندانہ پالیسیوں نے الٹا جواب دیا ہے۔

صدر ابراہیم رئیسی نے ایران اور سوئٹزرلینڈ کےسوسال سے زیادہ قدیمی تعلقات کی جانب اشارہ کیا اور کہا کہ ایران ، سوئٹزرلینڈ سمیت تمام ممالک کے ساتھ سیاسی ، اقتصادی اور تجاری تعلقات کو زیادہ سے زیادہ فروغ دینے کا خواہاں ہے۔

سوئٹزرلینڈ کی سفیر نے کہا کہ دونوں ممالک کے درمیان سفارتی تعلقات کے قیام کے سو سال سے زائد عرصے میں ہمیشہ ایک دوسرے کے ساتھ مثبت اور تعمیری تعاملات اور تعاون رہے ہیں۔

ایران کے صدر نے آج لیتھوانیا کے بھی سفیر کے اسناد تقرری وصول کرتے ہوئے کہا کہ ایران اور لیتھوانیہ کے درمیان مختلف میدانوں میں تعلقات کو فروغ دینے اور باہمی اقتصادی و تجارتی تعاون کی کافی گنجائش موجود ہے۔

یہ بھی دیکھیں

جنگ بندی،یمنی عوام کے مسائل حل کرنے کے لئے مذاکرات کا بہترین موقع ہے،وزیر خارجہ ہشام شرف

صنعا:یمن کی نیشنل سالویشن حکومت کے وزیر خارجہ نے کہا ہےکہ یمنی شہریوں کی اہم …