بدھ , 10 اگست 2022
تازہ ترین

عراق کے ساتھ ایران کے تعلقات معمولی اور روایتی نہیں ہیں

اتوار کی سہ پہر عراقی وزیر اعظم مصطفیٰ الکاظمی کے ساتھ ایک مشترکہ پریس کانفرنس میں حجۃ الاسلام والمسلمین سید ابراہیم رئیسی نے ان کے دورہ ایران پر اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے کہاکہ عراق کے ساتھ ایران کے تعلقات عام اور روایتی نہیں، بلکہ ایسے گہرے تعلقات ہیں۔
عراق کے ساتھ ایران کے تعلقات معمولی اور روایتی نہیں ہیں مقدس دفاع نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق، اتوار کی سہ پہر عراقی وزیر اعظم مصطفیٰ الکاظمی کے ساتھ ایک مشترکہ پریس کانفرنس میں حجۃ الاسلام والمسلمین سید ابراہیم رئیسی نے ان کے دورہ ایران پر اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے کہاکہ عراق کے ساتھ ایران کے تعلقات عام اور روایتی نہیں، بلکہ ایسے گہرے تعلقات ہیں جن کا تعلق دونوں ممالک کی مشترکہ ثقافت اور عقائد سے ہے۔ آج دونوں ممالک کے اعلیٰ حکام تمام شعبوں میں تعلقات کو فروغ دینے کے لیے گہری اور سنجیدہ خواہش رکھتے ہیں۔

صدر مملکت نے پڑوسی ممالک کے ساتھ تعلقات کو وسعت دینے کے سلسلے میں 13ویں حکومت کی اصولی پالیسی کا ذکر کرتے ہوئے مزید کہاکہ "آج ہم مملکت عراق کو ایران کے قریب ترین ملک کے طور پر دیکھتے ہیں اور اس کے ساتھ مختلف شعبوں میں ہمارے قریبی تعلقات ہیں۔ ہمسایہ ممالک میں عراق کے ساتھ ہمارے قریبی اور قریبی تعلقات ہیں۔
انہوں نےمزید کہا کہ آج کی ملاقات میں ہم نے طے کیا ہے کہ دونوں ممالک کے درمیان سیاسی، اقتصادی اور تجارتی تعلقات کو وسعت دی جائے گی۔

صدر نے کہا کہ عراقی وزیر اعظم کے ساتھ بات چیت میں شلمچہ کو بصرہ سے ملانے والے ریلوے منصوبے پر عمل درآمد کو تیز کرنے پر اتفاق کیا گیا ہے۔ اس منصوبے کی کامیابی سے دونوں ممالک کے درمیان تعلقات کو آسان بنانے اور بڑھانے پر بہت زیادہ اثر پڑے گا۔

انہوں نےاس والی بات چیت میں دونوں ممالک کے درمیان مالیاتی اور بینکاری تعلقات کو آسان بنانے کے لیے کئے گئے نئے اقدامات کا بھی تذکرہ کیا۔

صدر مملکت نے اپنی تقریر کے دوران ایرانی عوام کی طرف سے حرم امام حسین علیہ السلام اور مقدس مقامات کی زیارت کی خواہش کا ذکر کرتے ہوئے کہا:عراقی حکومت اور جناب الکاظمی کی جانب سے دی گئی سفری سہولیات قابل تعریف ہیں اس طرح ایرانی زائرین زمینی اور فضائی راستے سے بغیر ویزے کے مقدس مقامات بالخصوص امام حسین علیہ السلام کے روضہ مبارک کی زیارت کرسکیں گے۔

انہوں نے مزید کہا کہ عراقی حکومت اربعین حسینی کے موقع پر زائرین کو مزید سہولیات فراہم کرے گی اور کورونا کی وجہ سےدرپیش صورتحال میں بہتری کی وجہ سے زائرین اربعین ہوائی اور زمینی سرحدوں سے باآسانی عراق کا سفر کر سکیں گےاور گزشتہ برسوں میں پیش آنے والے مسائل دور ہو جائیں گے۔

صدر مملکت نے خطے کے ممالک کے درمیان تعلقات کو مضبوط بنانے کے لیے ایرانی اور عراقی سربراہوں کی تاکید کا حوالہ دیتے ہوئے کہا: ہمارا عقیدہ یہ ہے کہ ممالک کے سربراہوں کے درمیان بات چیت کے ذریعے خطے کے مسائل حل ہو سکتے ہیں اور ہم نے اس بات پر زور دیا ہے کہ خطے میں اجنبیوں کی موجودگی یا مداخلت سے نہ صرف یہ کہ مسائل حل نہیں ہوں گے ، بلکہ اس طرح مشکلات جنم لیتی ہیں۔ اسی لیے ہم نے مشکلات اور مسائل کے حل کے لیے خطے کے ممالک کے سربراہوں کی باہمی گفت وگو پر تاکید کی ہے

یہ بھی دیکھیں

بھارت بارشوں اور سیلاب سے ہلاکتوں کی تعداد 73 ہوگئی

نئی دہلی: بھارتی ریاست کرناٹک میں موسلادھار بارشوں اور سیلاب سے ہونے والی ہلاکتوں کی …