بدھ , 30 نومبر 2022

ایران کے خلاف عرب نیٹو کی تشکیل مضحکہ خیز

عراق کے ایک فوجی ماہر نے ایران کے خلاف صیہونی حکومت کی قیادت میں فوجی اتحاد میں شرکت کے لیے بعض عرب ممالک کی تیاری کو مضحکہ خیز اور عربوں کے خلاف صیہونی حکومت کی چال قرار دیا۔
المعلومہ نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق عراق کے سابق فوجی مشیر صفاء العاصم نے اپنے ملک کے لیے کسی بھی عرب صیہونی فوجی اتحاد میں شمولیت کو ناممکن قرار دیا اور اس بات پر زور دیا کہ اس اتحاد میں عراق کی شمولیت اور صیہونی حکومت کے ساتھ تعلقات کو معمول پر لانا ہمارے وزیر اعظم مصطفیٰ الکاظمی پر غداری کا لیبل لگا دے گا۔

العاصم نے مزید کہا کہ مصر، بحرین، متحدہ عرب امارات، سعودی عرب اور اردن ایران کے خلاف اسرائیل کی قیادت میں فوجی اتحاد میں شامل ہونے کی تیاری کر رہے ہیں جو کہ مضحکہ خیز لگتا ہے، انہوں نے اپنی بات جاری رکھتے ہوئے کہا کہ اس فوجی اتحاد میں عراق کی شرکت کی صورت میں صیہونی حکومت کے ساتھ تعلقات کو معمول پر لانے کے جرم کے قانون کی سنگین غداری کے الزام وزیر اعظم کے خلاف عائد ہو جائے گا، لہذا ہماری حکومت کسی بھی طرح سے ایسے راستوں میں داخل نہیں ہو سکتی۔

یہ بھی دیکھیں

سپاہ پاسداران نے جنوبی علاقے میں ایک عرب انٹیلی جنس سروس کی سازشوں کو بے نقاب کیا

تہران:سپاہ پاسداران انقلاب نے ایک ایک رجعت پسند عرب انٹیلی جنس سروس کے ایک ایجنٹ …