پیر , 26 ستمبر 2022

تین صوبوں کے 28 اضلاع میں آمدن میں کمی، بیماری اور اموات میں اضافہ

اقوام متحدہ کی فوڈ اینڈ ایگریکلچر آرگنائزیشن کی جانب سے کیے گئے سروے کے مطابق سندھ، بلوچستان اور خیبر پختونخوا کے 28 اضلاع میں جن گھرانوں کا سروے کیا گیا، ان میں سے نصف سے زائد میں آمدنی میں کمی، خوراک اور ایندھن کی زیادہ قیمتوں، بیماری یا اموات کے بارے میں اطلاع دی۔

رپورٹ کے مطابق جمعہ کو جاری کیے گئے سروے کے نتائج میں کہا گیا کہ ان گھرانوں نے ناصرف اہم فصلوں کی فروخت بلکہ زرعی تجارت اور آرام دہ کھیتی مزدوری سے بھی زرعی آمدنی میں کمی کی اطلاع دی ہے، مارچ-اپریل 2022 میں کیے گئے سروے کے مطابق زرعی جھٹکے معاشی جھٹکوں کے مقابلے میں کم تھے لیکن کچھ اضلاع میں اس کے پھیلاؤ کی شرح مجموعی اوسط سے بہت زیادہ تھی، اس تیسرے دور کے سروے میں 6ہزار 990 دیہی گھرانوں کو بطور نمونہ استعمال کیا گیا، جو ضلعی سطح پر نمائندہ تھے۔

فوڈ اینڈ ایگریکلچر آرگنائزیشن نے یہ سروے ہنگامی نگرانی کے نظام میں موجود اعداد و شمار کے ذریعے کیا تاکہ تینوں صوبوں میں زرعی معاش اور غذائی تحفظ کی نگرانی کی جا سکے۔

خیبر پختونخوا کے سات اضلاع باجوڑ، خیبر، کرم، مہمند، شمالی وزیرستان، اورکزئی اور جنوبی وزیرستان میں بالمشافہ انٹرویوز کیے گئے، بلوچستان میں جن 12 اضلاع کا سروے کیا گیا ان میں چاغی، گوادر، ہرنائی، کیچ، خاران، قلعہ عبداللہ، لورالائی، نوشکی، پنجگور، پشین، واشوک اور ژوب شامل ہیں، سندھ میں بدین، دادو، جامشورو، میرپورخاص، سانگھڑ، سجاول، تھرپارکر، ٹھٹھہ اور عمرکوٹ سمیت 9 اضلاع کا سروے کیا گیا۔

سروے کے مطابق مویشیوں اور بکریوں کے ریوڑ کے حجم میں ایک سال پہلے کے مقابلے میں کافی تبدیلی آئی ہے، ریوڑ کے حجم میں کمی کی اطلاع دینے والے کسانوں کا حصہ زیادہ تھا، خاص طور پر واشک، نوشکی اور چاغی میں واضح کمی ہوئی، ریوڑ کے حجم میں تغیرات زیادہ تر فروخت میں اتار چڑھاؤ، اموات اور چراگاہ کی خرابی کی وجہ سے آئے، چارہ، چراگاہ، اور ویٹرنری خدمات تک رسائی میں دشواری سب سے عام چیلنجز تھے جن میں چراگاہ تک رسائی بکریوں کے فارمرز کو سب سے زیادہ متاثر کرتی تھی۔

اعتدال پسند یا شدید حالیہ غذائی عدم تحفظ کا پھیلاؤ 40 فیصد تھا جس میں 3 فیصد کو حالیہ خوراک کی شدید عدم تحفظ کا سامنا ہے، سندھ کے اضلاع میں 48 فیصد کے ساتھ اعتدال پسند اور شدید آر ایف آئی کا سب سے زیادہ پھیلاؤ تھا، اس کے بعد بلوچستان 37 فیصد اور خیبر پختونخوا میں 28 فیصد تھا، کھانے کی کھپت کے اسکور سے یہ انکشاف ہوا کہ 27 فیصد لوگوں کی کھانے کی طلب کم رہی بالخصوص سندھ میں یہ 33 فیصد اور سرحدی علاقوں میں 32فیصد رہی۔

ناقص خوراک کی کھپت کے علاوہ گھرانوں کا ایک بڑا حصہ اثاثوں کو ختم کرنے والی روزی روٹی سے نمٹنے کی حکمت عملیوں کا استعمال کرتا ہے، زیادہ تر جواب دہندگان نے نقد یا خوراک کی امداد کو سب سے فوری ضرورت کے طور پر شناخت کیا لیکن گھرانوں کے ایک بڑے حصے نے زرعی آدانوں جیسے بیج، کھاد، جانوروں کی خوراک اور ویٹرنری خدمات کا ذکر کیا۔

فوڈ اینڈ ایگریکلچر آرگنائزیشن نے دیہی گھرانوں کو گھریلو خوراک کی حفاظت، غربت میں کمی اور حالات زندگی کو بہتر بنانے کا موقع فراہم کرنے کے لیے روزگار اور خوراک کے تنوع کی سرگرمیاں کرنے کی سفارش کی ہے، اقوام متحدہ کی ایجنسی نے موسمیاتی لچکدار زراعت کے طریقوں اور پانی کے انتظام کے بارے میں کسانوں کے لیے صلاحیت سازی کے پروگرام قائم کرنے کی بھی سفارش کی۔

یہ بھی دیکھیں

مسلمانوں میں لڑائی جھگڑے،اختلافات کا خاتمہ ہونا چاہیے: مقتدیٰ صدر

بغداد:عراق کے مذہبی اور سیاسی رہنما مقتدی صدر نے مسلمانوں میں لڑائی جھگڑے ، جنگ …