اتوار , 25 ستمبر 2022

امریکہ کا ناکام میزائل تجربہ؛ بین البراعظمی بیلسٹک میزائل کا ہوا میں دھماکہ

تہران، – امریکی حکام، جو اپنے ملک کی فوجی طاقت کے چین اور روس کے پیچھے پڑ جانے سے پریشان ہیں، نے اعلان کیا کہ ایک بین البراعظمی بیلسٹک میزائل بدھ کی رات دیر گئے، کیلیفورنیا میں وینڈنبرگ اسپیس فورس بیس سے لانچ ہونے کے چند سیکنڈ بعد ہی پھٹ گیا۔

 رپورٹ کے مطابق، اس اڈے کے حکام نے جمعرات کو مقامی وقت کے مطابق اس تجربے کی ناکامی کی تصدیق کرتے ہوئے ایک بیان میں کہا کہ Minotaur II راکٹ بدھ کی رات مقامی وقت کے مطابق 11:10 پر لانچ ہونے کے تقریباً 11 سیکنڈ بعد ہوا میں پھٹ گیا۔

ان حکام کے مطابق اس میزائل کے پھٹنے کے نتیجے میں وینڈن برگ اسپیس فورس بیس میں آگ لگ گئی تاہم میزائل کا ملبہ لانچنگ سائٹ کے قریب زمین سے ٹکرا گیا اور کوئی زخمی نہیں ہوا۔

فائر فائٹرز کو اس بیس پر بھیجا گیا اور اس پر قابو پانے میں کامیاب ہوگئے۔ دھماکے کی وجہ جاننے کی تحقیقات شروع کر دی گئی ہیں۔

یہ میزائل بین البراعظمی بیلسٹک میزائل ایل جی ایم 35A کے ساتھ، جو ابھی تک پیداوار میں ہے، امریکی فوج کے پرانے منٹ مین میزائلوں کی جگہ لے گا۔

دریں اثنا، سی این این نیوز چینل نے بھی 10 جولائی کو خبر دی ہے کہ امریکی ہائپر سونک میزائل کا اپنے مکمل نظام کے ساتھ پہلا تجربہ ناکام ہو گیا۔

لہذا اس ٹیسٹ کی رپورٹ جو کہ ہوائی میں پیسیفک میزائل رینج کی سہولت میں کی گئی تھی، اس میزائل کی باڈی کو "کامن ہائپرسونک گلائیڈ باڈی” کے نام سے دو مرحلوں والے بوسٹر بوسٹر پر ٹیسٹ کرنا تھا۔یہ راکٹ باڈی اس بوسٹر کے بغیر تقریباً مچ 5 کی رفتار تک نہیں پہنچ سکتا۔

سی این این نے مزید کہا کہ جب کہ امریکی فوج اپنے پہلے ہائپرسونک میزائل کو اپنے مکمل نظام کے ساتھ لانچ کرنے میں ناکام رہی، اس ملک کی کانگریس نے طویل عرصے سے امریکی میزائل ٹیکنالوجی کے چین اور روس سے پیچھے رہنے پر تشویش کا اظہار کیا ہے، کیونکہ روس اب اس ٹیکنالوجی کو اپنے مقاصد میں استعمال کر رہا ہے۔

واضح رہے کہ  امریکی فضائیہ نے گزشتہ ماہ 27 مئی کو ایک ہائپر سونک میزائل کے کامیاب تجربے کا اعلان کیا تھا۔ ایک ایسا میزائل جس کا تجربہ ماضی میں تین بار ناکام ہو چکا تھا۔ بوسٹر کے بغیر یہ میزائل، جس کا پینٹاگون تجربہ کرنا چاہتا تھا، تجربہ کر لیا گیا تھا۔

امریکی میزائل ڈیفنس ایجنسی نے بھی گزشتہ سال جون میں اعتراف کیا تھا کہ ایک امریکی جنگی جہاز درمیانے فاصلے تک مار کرنے والے ایک بیلسٹک میزائل کا تجربہ کرنے میں ناکام رہا تھا۔

ایجنسی نے ایک بیان میں کہا کہ اس ٹیسٹ کا مقصد ایگیس جہاز کی درمیانے فاصلے تک مار کرنے والے بیلسٹک میزائل کی شناخت، ٹریک، مقابلہ اور اسے روکنے کی صلاحیت کو ظاہر کرنا تھا۔

امریکی میزائل ڈیفنس ایجنسی کا بیان جاری ہے کہ درمیانے فاصلے تک مار کرنے والے بیلسٹک میزائل کو روکنے کے لیے آگیس جہاز سے دو ایس ایم-6 میزائل داغے گئے

یہ بھی دیکھیں

سینیٹ کی رکنیت کا حلف اٹھانے کے بعد اسحاق ڈار بطور وزیر خزانہ حلف اٹھائیں گے

اسلام آباد: لندن میں مسلم لیگ (ن) کے قائد نواز شریف اور وزیراعظم شہباز شریف …