منگل , 27 ستمبر 2022

امریکہ اور چین کی جنگ، دنیاپہلی جنگ عظیم کے حالات سے بھی کہیں بدتر ہوگی۔ہنری کسنجر

واشنگٹن:

سابق امریکی وزیر خارجہ ہنری کسنجر نے سی ان ان کو ایک خصوصی انٹرویو کے دوران امریکہ اور چین کے مابین بڑھتے تناو پر خبردار کرتے ہوئے کہا یہ تناو عسکری مقابلہ آرائی کا سبب بنے گا کہ جس کا نتیجہ دنیا کی تباہی کی صورت میں برآمد ہوگا۔

انہوں نے کہا کہ چین نے ہماری سوچ سے بھی بہت زیادہ تیزی کے ساتھ ترقی کی ہے اور شاید اس سے پہلے اس مسئلے کے بارے میں سوچنا چاہئے تھا کیونکہ چین اس وقت دنیا کا دوسرا طاقتور ترین ملک ہے۔

سابق امریکی وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ بنیادی اور اہم مسئلہ جو اس مقام پر سامنے آتا ہے یہ ہے کہ امریکہ یقین رکھتا ہے ﴿چین کے ساتھ جنگ کی صورت میں﴾ اس پر جیت حاصل کر کے باقی رہ سکتا ہے۔ ہمارے اسی یقین اور سوچ نے ہمیں چین کے ساتھ مقابلہ آرائی کی جانب دھکیلا ہے۔ تاہم کیا ہمیں چین کے ساتھ عسکری مقابلہ آرائی کا سامنا کرنا چاہئے یا ہم گفتگو اور مذاکرات کے ذریعے اس مخصوص صورتحال کا مقابلہ کرنے کوشش کرسکتے ہیں؟

کسنجر اس نازک صورتحال کی اس طرح تشریح کرتے ہیں کہ اس صورتحال کے متعلق تازہ اور خاص مسئلہ یہ ہے کہ ان دونوں ملکوں میں سے ہر ایک اکیلے ہی دنیا کو تباہ کرسکتا ہے اور اگر یہ دونوں جنگ کی طرف گئے تو دنیا ایسی صورتحال سے دوچار ہوگا کہ پہلی جنگ عظیم کے بعد والے حالات سے بھی کہیں بدتر ہوگی۔کسنجر نے تجویز دی کہ ان کے خیال میں امریکہ اور دوسرے ممالک کی خارجہ پالیسی کی ذمہ داری ہے کہ حالات کو قابو میں رکھنے کے لئے آپس میں گفتگو اور بات چیت کریں۔

یہ بھی دیکھیں

کوئی طاقت ایرانی سرحدوں پر حملہ کرنے کی جرات نہیں کر سکتی: ایڈمرل سیاری

تہران:اسلامی جمہوریہ ایران کی فوج کے ڈپٹی کوآرڈینیٹر نے کہا ہے کہ کسی طاقت کو …