ہفتہ , 1 اکتوبر 2022

روس شمالی کوریا سے اسلحہ خرید کر رہا ہے، امریکہ

واشنگٹن:امریکا کے فوجی ترجمان نے دعویٰ کی اہے کہ یوکرین میں کئی مہینوں کی جنگ کے بعد روس ہتھیاروں کے خالی ہوتا اپنا ذخیرہ پورا کرنے کے لیے۔

غیر ملکی خبر رساں ایجنسی ’اے ایف پی‘ کی رپورٹ کے مطابق پینٹاگون کے ترجمان برگیڈیئر جنرل پاٹ رائڈر نے دعویٰ کیا ہے کہ ’ہمیں اس بات کا اشارہ ملا ہے کہ روس نے بھاری مقدار میں ہتھیار خرید کے لیے شمالی کوریا سے رابطہ کیا ہے‘۔

ادھر امریکی حکام کی طرف سے جاری ایک اور بیان میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ شمالی کوریا کی طرف سے خریدے جانے والے ہتھیاروں میں آرٹلری شیل، راکٹس شامل ہوسکتے ہیں جو یوکرین کے خلاف جنگ میں استعمال ہوں گے۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ ہتھیاروں کی اس خریداری سے ظاہر ہوتا ہے کہ روس کو یوکرین میں ہتھیاروں کی فراہمی میں شدید قلت کا سامنا ہے جس کی وجہ جزوی طور پر برآمد پر پابندی ہے۔

خیال رہے کہ روس نے 24 فروری کو یوکرین پر حملہ کیا تھا جس کے بارے میں ان کو بظاہر توقع تھی کہ وہ چند ہفتوں میں ملک پر قبضہ کر لے گا، مگر یوکرین نے امریکا، نیٹو اتحاد اور یورپی یونین کے دیگر ممالک سے بھاری ہتھیاروں کی مدد سے روس کی اس پیش رفت کو ناکام بنایا۔دونوں فریقین نے جنگ میں بھاری پیمانے پر ہتھیاروں اور توپ خانہ گولہ بارود کا نقصان کیا ہے۔

رپورٹ میں بتایا گیا کہ امریکا اور اتحادیوں کی جانب سے طویل فاصلے تک مار کرنے والے میزائلوں کی فراہمی نے یوکرین کو فرنٹ لائن اور پچھلی صفوں پر بھی درجنوں روسی گولہ بارود کے ڈپو نشانہ بنانے کی صلاحیت حاصل کرلی ہے جبکہ مغربی پابندیوں نے ماسکو کے لیے کمپیوٹر چپس سمیت متبادل ہتھیار بنانے کے لیے اجزا کا حصول مشکل کر دیا ہے۔

امریکی فوجی ترجمان کا کہنا تھا کہ شمالی کوریا سے ہتھیاروں کی خریداری سے ظاہر ہوتا ہے کہ روس کو یوکرین میں اپنے فوجیوں کو ہتھیاروں کی فراہمی میں قلت کا شدید سامنا ہے۔

یہ بھی دیکھیں

ڈھائی کروڑ افغان شہریوں کو فوری امداد کی ضرورت ہے: اقوام متحدہ

کابل:افغانستان میں اقوام متحدہ کی انسان دوستانہ امداد کے کوآرڈینیٹر ادارے نے ڈھائی کروڑ کے …