پیر , 26 ستمبر 2022

خلائی کام اور تحقیق جاری رکھنے کی ضرورت ہے: جنرل حاجی زادہ

تہران:پاسداران اسلامی انقلاب کی فضائیہ کے کمانڈر نے کہا ہے کہ آج کی دنیا اور مستقبل کے حقائق کی بنا پر ہمیں خلائی کام اور تحقیق کرنے کو جاری رکھنا چاہیئے اور یہ ہر ملک کی طاقت کے اجزاء میں سے ایک ہے، جس کے نتائیج زراعت، سیلاب پر قابو پانا اور مختلف شعبوں میں مددگار ثابت ہوسکتے ہیں۔

یہ بات بریگیڈیئر جنرل امیر علی حاجی زادہ نے خواجہ ناصرالدین طوسی یونیورسٹی کے سربراہ، پروفیسرز اور ماہروں کے سپاہ پاسداران کی ایرو اسپیس فورس کے نیشنل پارک اور ٹیکنالوجی کے دورے کے موقع پر کہی۔

انہوں نے کہا کہ ہم نے یونیورسٹیاں اور دفاع کے درمیان باہمی تعاون میں اچھی کامیابیاں حاصل کرلی ہیں۔یونیورسٹی اور اگر ہم خاردار تاریں درآمد کرنے والے سے ٹیکنالوجی کے برآمد کنندہ تک پہنچ گئے ہیں اور علم کی سرحدوں کو عبور کرتے ہوئے مصنوعی ذہانت سے ایک ہزار کلومیٹر سے زائد فاصلے پر موجود دشمن کو شکست دے چکے ہیں، سب اس یونیورسٹیوں سے تعلق سے ملا ہے۔

جنرل حاجی زادہ نے خطے کی صورتحال اور پیش رفت کی وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ آج خطے میں حالات بہت اچھے ہیں، ہمارے پاس ایک مشکل دہائی ہے جس کا آغاز اوباما کی مفلوج پابندیوں سے ہوا اور اس کے بعد خطے میں کشیدگی بڑھانے والے اقدامات اور ٹرمپ کے زیادہ سے زیادہ دباؤ اور شہید قاسم سلیمانی کے وحشیانہ قتل اور ٹرمپ انتظامیہ کی جوہری معاہدے سے علیحدگی تھے مگر قائد اسلامی انقلاب حضرت آیت اللہ العظمی سید علی خامنہ ای کی اعلی حکمت عملی کے ساتھ دشمن کو سخت ضربیں لگیں اور خطے کا توازن اس قدر بدل گیا، حالیہ برسوں تک خطے کی بعض حکومتیں جو امریکہ کے ساتھ اتحاد کی خواہاں تھیں اور حال ہی میں انہوں نے صیہونیوں کے ساتھ ایران کے خلاف جارحانہ انداز اپنایا تھا، آج اپنے انداز کو جارحانہ سے دفاعی انداز میں بدل چکے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ آج دشمن اعتراف کرتا ہے کہ زیادہ سے زیادہ دباؤ ناکام ہو گیا ہے اور اسلامی جمہوریہ ایران نے 80 سال کے بعد ہماری فضائی برتری حاصل کر لی ہے اور ایک غیر متنازعہ طاقت بن گیا ہے اور عرب ممالک کے بعض حکام کے مطابق، گلوبل ہاوک جاسوس طیارے کو مار گرانے سے پہلے اور بعد میں تاریخ کی اصل کا تعین کیا جانا چاہیے۔

پاسداران اسلامی انقلاب کی فضائیہ کے کمانڈر نے کہا کہ ایران کی سلامتی مقامی اور بہترین سطح پر ہے اور ہم نے دفاعی اور عسکری میدان میں بہت مشکل کاموں سے گزرا ہے، خلائی میدان میں، ہم نے تین سال سے بھی کم عرصے میں ایک سیٹلائٹ کو مدار میں ڈالا، ہم راڈار کی تیاری میں دنیا کے ٹاپ 20 ممالک میں شامل ہیں اور ہم ڈرونز اور کروز میزائل کے میدان میں سرفہرست طاقتوں میں شامل ہیں، ان میں سے کوئی بھی حادثاتی نہیں تھا، ہم نے یہ نتائج قطعی ہدف کے تعین، منظم انتظام، توجہ اور ٹیلنٹ کی تلاش، جہادی عمل اور ملک کے ماہرین اور یونیورسٹیوں کے ساتھ بات چیت کے ذریعے حاصل کیے ہیں۔

یہ بھی دیکھیں

پاک فوج کا ہیلی کاپٹر بلوچستان میں گر کر تباہ، 6 اہلکار شہید

کوئٹہ:پاک فوج کے شعبۂ تعلقاتِ عامہ (آئی ایس پی آر) نے بتایا ہے کہ پاک …