پیر , 26 ستمبر 2022

ایران معاہدے میں ابہام قبول نہیں کرے گا، روس

ویانا:ویانا میں روسی ایلچی نے کہا ہے کہ یہ واضح ہے کہ ایران ویانا میں ہونے والی بات چیت کے ذریعے طے پانے والے ممکنہ معاہدے میں خامیوں اور ابہام کو قبول نہیں کرے گا۔یہ بات میخائیل اولیانوف نے منگل کے روز اپنے ٹوئٹر پیج میں کہی۔اس موقع پر انہوں نے کہا کہ یہ واضح ہے کہ ایران خامیوں اور ابہام کو قبول نہیں کرے گا۔

اولیانوف جوہری مذاکرات کے ایرانی ماہر محمد مرندی کے ایک ٹویٹ کا جواب دے رہے تھے جنہوں نے یورپی یونین کی خارجہ پالیسی کے سربراہ جوزپ بورل کو مذاکرات میں موجودہ جمود کا ذمہ دار فریق کے طور پر ایران کو غلط شناخت کرنے پر تنقید کا نشانہ بنایا۔

انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ بین الاقوامی تعلقات کے پیچیدہ کردار کے باوجود، ویانا مذاکرات کے شرکاء نے اب تک عملی ہونے کی صلاحیت کا مظاہرہ کیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق، اسلامی جمہوریہ ایران اور امریکہ اس معاہدے کو حتمی شکل دینے کے لیے بورل کے تجویز کردہ حالیہ مسودے پر یورپی یونین کے رابطہ کار کے ذریعے تبصروں کا تبادلہ کر رہے ہیں جس سے امریکہ کو جوہری معاہدے میں دوبارہ شامل ہونے کی اجازت دی جائے گی۔

مرندی نے اپنی ٹوئٹ میں لکھا تھا کہ بورل امریکہ کا اتحادی ہے اور بھول جاتا ہے کہ ان مذاکرات کی وجہ مغربی ممالک کی جانب سے جوہری معاہدے کی خلاف ورزیاں ہیں اور ایرانی شہریوں کو نشانہ بنانے کے لیے زیادہ سے زیادہ دباؤ کی پابندیاں ہیں، حالانکہ ایران اس کی مکمل تعمیل کر رہا تھا۔ ایران خامیوں اور ابہام کو قبول نہیں کرے گا، امریکہ یورپی یونین پر اخراجات کر رہا ہے۔

یہ بھی دیکھیں

وزیراعظم ہاؤس کی مبینہ آڈیوز لیک،اہم راز افشاں

اسلام آباد: سوشل میڈیا پر مبینہ طور پر وزیراعظم ہاؤس کی متعدد آڈیو لیک ہوئی …