جمعرات , 6 اکتوبر 2022

اسرائیل نے ترکی کے ساتھ ہوا بازی کے معاہدے کی منظوری دے دی

یروشلم :صیہونی حکومت کی کابینہ نے اتوار کے روز ترکی کے ساتھ ہوا بازی کے معاہدے کی منظوری دے دی، جسے 1951 کے بعد پہلا معاہدہ سمجھا جاتا ہے۔

اسرائیل کے عبوری وزیر اعظم يائير لاپڈ نے اپنے ٹوئٹر پیج پر لکھا کہ آج کابینہ کے اجلاس میں ہم نے ترکی اور اسرائیل کے درمیان فضائی لائن قائم کرنے کے معاہدے کی منظوری دی۔

انہوں نے مزید کہا کہ اب سے اسرائیلی ایئر لائنز کے طیارے استنبول کے ہوائی اڈے اور ترکی کے دیگر شہروں سے اتر سکتے ہیں اور اڑ سکتے ہیں۔

صیہونی حکومت کے وزیر اعظم نے دعویٰ کیا کہ اس معاہدے سے اسرائیلی مسافروں اور ہماری فضائی کمپنیوں کو فائدہ پہنچے گا۔ یہ خطے کے استحکام اور خوشحالی میں بھی ایک اسٹریٹجک اور اہم اقدام ہوگا۔

انہوں نے دعویٰ کیا کہ ہوا بازی کا معاہدہ دونوں ممالک کے درمیان تعلقات کی ترقی میں بھی بڑا کردار ادا کرے گا۔انہوں نے ترکی کے ساتھ تعلقات بڑھانے کے لیے سفیر کی تقرری کو اگلا قدم سمجھا۔

ایوی ایشن معاہدے کا اعلان ترکی کے صیہونی حکومت کے ساتھ تعلقات کو معمول پر لانے کے منصوبے کے تحت حیفہ کی بندرگاہ میں ایک جنگی جہاز کے داخل ہونے کے بعد شائع ہوا ہے۔

کان کے نام سے مشہور اسرائیلی ٹیلی ویژن چینل نے اطلاع دی ہے کہ ترک بحریہ کا ایک جنگی جہاز ہفتے کے روز حیفہ کی بندرگاہ پر ٹکرا گیا۔

ترکی کے صدر رجب طیب اردگان نے گزشتہ اگست میں اسرائیلی وزیر اعظم يائير لاپڈ سے ٹیلی فون پر بات چیت کی تھی اور اس گفتگو کے دوران دونوں فریقین نے مکمل سفارتی تعلقات بحال کرنے پر اتفاق کیا تھا۔

صیہونی حکومت کے وزیر اعظم یائر لاپد کے دفتر نے 26 اگست کو اعلان کیا تھا کہ اس حکومت اور ترکی نے سفیروں کے تبادلے کا معاہدہ کیا ہے۔

صیہونی حکومت کے وزیر اعظم کے دفتر کے بیان میں کہا گیا ہے کہ یہ معاہدہ لاپد اور ترکی کے صدر رجب طیب اردوان کے درمیان ٹیلی فونک گفتگو کے دوران طے پایا۔

یہ بھی دیکھیں

یوکرین کی فوج نے پیش قدمی تیز کر دی ہے:یوکرینی صدر

یوکرینی صدر ولودیمیر زیلنسکی نے کہا ہے کہ ان کی فوج نے ملک کے جنوبی …