جمعرات , 6 اکتوبر 2022

ملکہ الزبتھ دوم کی وفات: برطانیہ میں کیا ہورہا ہے؟

(احمد شاہین)

برطانیہ کی ملکہ الزبتھ دوم، جمعرات کے روز 96 برس کی عمر میں، اسکاٹ لینڈ میں انتقال کرگئیں۔ انہوں نے 70 سال تک برطانوی سربراہِ مملکت کی ذمہ داریاں نبھائیں۔ ملکہ ان دنوں اسکاٹ لینڈ میں اپنی شاہی رہائش گاہ میں موجود تھیں اور اپنی وفات سے محض 2 روز قبل ہی انہوں نے برطانیہ کی نو منتخب وزیرِاعظم لز ٹرس سے ملاقات کی تھی۔

جمعرات کی صبح شاہی حکام کی جانب سے ملکہ کی صحت کے حوالے سے غیر معمولی طور پر تشویش کا اظہار کیا گیا تھا جس کے بعد شاہی خاندان کے افراد اسکاٹ لینڈ میں ان کی رہائش گاہ پر جمع ہونا شروع ہوگئے۔ اسی دوران برطانوی نشریاتی ادارے نے اپنی معمول کی نشریات روک کر صرف ملکہ اور ان کی صحت کے حوالے سے اپ ڈیٹس دینا شروع کردیں جس سے لوگوں میں چہ مگوئیاں بڑھنے لگیں۔

پورے برطانیہ اور خاص کر لندن میں جمعرات کا دن کافی ہنگامہ خیز رہا۔ ملکہ الزبتھ دوم کی علالت کے حوالے سے نشر ہونے والے پیغام کے بعد ہی سے برطانوی عوام کی ایک بڑی تعداد لندن میں ان کی رہائش گاہ بکنگھم پیلس کے باہر جمع ہونی شروع ہوگئی۔ اگرچہ ملکہ اسکاٹ لینڈ میں مقیم تھیں لیکن ان کے چاہنے والے تیز بارش اور ہوا کے باوجود، دعاؤں اور نیک تمناؤں کے اظہار کے لیے لندن میں شاہی رہائش گاہ کے اطراف میں پہنچے۔

برطانوی وقت کے مطابق شام ساڑھے 6 بجے ملکہ برطانیہ کی وفات کا باقاعدہ اعلان ہوا اور سرکاری عمارتوں پر برطانوی پرچم سرنگوں کردیا گیا۔ ٹیلیوژن پر کالے لباس میں ملبوس معروف براڈکاسٹر ہو ایڈورڈز نے ملکہ برطانیہ کے انتقال کا اعلان کیا اور اس کے بعد قومی ترانہ بجایا گیا۔

ملکہ کی سرکاری رہائش گاہ بکنگھم پیلس کے دروازے پر ایک مختصر شاہی فرمان بھی آویزاں کیا گیا جس پر ملکہ برطانیہ کی وفات کا اعلان کیا گیا ہے۔ یوں برطانیہ قومی سوگ کی کیفیت میں داخل ہوچکا ہے۔

شاہی روایات کی پاسداری کے طور پر ملکہ کی وفات سے قبل ہی حکام نے ان کی ممکنہ وفات سے متعلق تیاریاں پوری کر رکھی تھیں اور ان کی وفات کے ساتھ ہی اس پلان جسے ‘آپریشن لندن برج’ بھی کہا جاتا ہے پر عمل درآمد شروع ہوگیا ہے۔ چونکہ ملکہ کی وفات ان کی روایتی رہائش گاہ بکنگھم پیلس کے بجائے اسکاٹ لینڈ میں ہوئی ہے اس لیے ملکہ کے جسد خاکی کو لندن پہنچانا پلان کا پہلا حصہ ہوگا جسے ‘آپریشن یونی کورن’ کا نام دیا گیا ہے۔

ملکہ الزبتھ دوم کی وفات کے فوری بعد ہی ملک بھر میں معمولاتِ زندگی میں واضح تبدیلیاں آئی ہیں اور ملکہ کی تدفین جس میں تقریباً 10 دن کا عرصہ لگے گا، اس وقت تک معمولات قدرے متاثر رہیں گے۔ بڑے ٹی وی چینلز نے اپنی معمول کی نشریات معطل کر رکھی ہیں اور وہ ملکہ برطانیہ سے متعلق مواد ہی نشر کررہے ہیں جبکہ قومی سوگ کی وجہ سے کامیڈی پروگرامات بھی نشر نہیں کیے جائیں گے۔

ملک میں موجود تھیٹرز کو اگرچہ بند نہیں کیا گیا لیکن تھیٹرز انتظامیہ کی جانب سے اعلان کیا گیا ہے کہ وہ سوگ کے اظہار کے لیے روشنیاں مدھم کردیں گے جبکہ یہی اعلان عوامی مقامات کے حوالے سے بھی کیا گیا ہے۔

اس افسوسناک خبر کی وجہ سے کھیل بھی متاثر ہوئے ہیں۔ اوول اسٹیڈیم میں انگلینڈ اور جنوبی افریقہ کی کرکٹ ٹیمیوں کے مابین منعقد ہونے والا میچ ملتوی کردیا گیا ہے جبکہ قومی سطح پر سوگ کی کیفیت کے سبب ملک بھر میں فٹ بال، گالف، رگبی، گھڑ سواری اور سائیکلنگ کے متعدد ایونٹس بھی ملتوی کردیے گئے ہیں۔

قومی سوگ کے اس موقع پر اگرچہ کاروبار بند نہیں کیے گئے لیکن بڑے برانڈز دُکھ کی اس گھڑی میں میڈیا کمپینیز اور سوشل میڈیا پوسٹس کے ذریعے ملکہ الزبتھ دوم کو خراج تحسین پیش کررہے ہیں اور برطانوی عوام کے لیے ملکہ کی کاوشوں اور خدمات کا اعتراف کررہے ہیں۔

ملکہ برطانیہ کی وفات کے فوراً بعد ہی ان کے بیٹے پرنس چارلس، بادشاہ بن چکے ہیں اور وہ کنگ چارلس سوئم کے نام سے جانے جائیں گے۔ ملکہ کی سرکاری تدفین ان کی وفات کے تقریباً دس روز بعد ہوگی اور اس دوران تدفین، تعزیت، قومی سوگ اور ان معاملات سے متعلق دیگر امور طے کیے جائیں گے جبکہ ملکہ کی یاد میں دعائیہ تقاریب کا بھی اہتمام کیا جائے گا۔

اسی عرصہ میں نئے بادشاہ یعنی کنگ چارلس سوئم برطانوی پارلیمنٹ سے ملاقات کرکے حکومت کی جانب سے ملکہ کے انتقال پر تعزیت وصول کریں گے اور پھر مملکت کے دورے پر روانہ ہوجائیں گے جہاں وہ خاص طور پر اسکاٹ لینڈ اور ویلز کے اراکین پارلیمنٹ سے ملاقات کریں گے اور ان سے ملکہ کے انتقال پر تعزیت وصول کریں گے۔

اسی دوران ملکہ کی سرکاری تدفین سے پہلے اس تمام عمل کی ریہرسل بھی کی جائے گی جبکہ ملکہ کا تابوت ویسٹ منسٹر پیلس میں بھی 3 دن تک رکھا جائے گا۔ اس دوران روزانہ 23 گھنٹے پیلس کے دروازے عوام کے لیے کھلے ہوں گے تاکہ وہ ملکہ کے تابوت کا نظارہ کرسکیں۔

قومی سوگ کے آخری مرحلے میں ملکہ الزبتھ دوم کو مملکت کی جانب سے باقاعدہ طور پر خراج تحسین پیش کرنے کے لیے تقریبات کا انعقاد ہوگا۔ اس دوران لندن میں موجود تاریخی شاہی چرچ ویسٹ منسٹر ایبی میں ملکہ کی آخری رسومات ادا کی جائیں گی اور اس دن دوپہر کو پورے ملک میں 2 منٹ کی خاموشی اختیار کی جائے گی۔ آخری رسومات کے بعد تدفین کے لیے ملکہ کا جسد خاکی ونڈسر کاسل لے جایا جائے گا جہاں انہیں محل کے کنگ جارج ششم میموریل چیپل میں دفن کیا جائے گا۔

اس کے ساتھ ہی برطانیہ کے تخت اور برطانوی عوام کے دلوں پر طویل عرصے تک حکمرانی کرنے والی ملکہ الزبتھ دوم، منوں مٹی تلے سوجائیں گی لیکن ان کی یاد ہمیشہ برطانوی عوام کے ذہنوں میں زندہ رہے گی۔بشکریہ ڈان نیوز

یہ بھی دیکھیں

ایران پر خوردبین لگائے اہل وطن، یہ فساد ہے

(تحریر: ڈاکٹر ندیم عباس) ایران میں خواتین کتنی آزاد ہیں؟ اس کا اندازہ آپ کو …