ہفتہ , 1 اکتوبر 2022

کربلا: نظریات کا تصادم

اس دنیا کی تخلیق کے بعد سے ہی نیکی اور بدی کی قوتوں کے درمیان ایک مستقل کشمکش چلی آ رہی ہے۔ کربلا کا معرکہ درحقیقت اس قسم کے تصادم کی ایک نمایاں علامت ہے۔ یہ جنگ محض دو افراد حسین ابن علی (ع) اور یزید ابن معاویہ کے درمیان لڑائی نہیں تھی۔ لیکن یہ بنیادی طور پر دو متضاد نظریات یعنی حسینیت اور یزیدیت کے درمیان تصادم تھا۔ نظریات کا یہ تصادم اس کی جڑ میں ہے جسے "اسلام کی قیامت” کا نام دیا گیا ہے۔ یزیدیت اسلام کے لیے ایک وجودی خطرہ ہے۔ اس نے مسلم سیاست کو دبانے اور مسخر کرنے کی کوشش کی۔ چنانچہ حسینیت فوری طور پر یزیدیت کا مقابلہ کرنے اور مقابلہ کرنے کے لیے نمودار ہوئی۔ اسلام کو بچانے کے لیے آگے آیا۔ اس نے مسلم سیاست کو اندھیروں میں ڈوبنے سے روکنے کی بھی کوشش کی۔ قابل غور بات یہ ہے کہ حسینیت نے بالآخر یزیدیت کو مات دے دی۔

بنیادی طور پر احتساب، شفافیت اور مشاورت کے اصولوں پر مبنی؛ خلافت کا ادارہ 11 ہجری میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی وفات کے بعد وجود میں آیا لیکن بدقسمتی سے 30 سال سے کم عرصے میں خلافت کا یہ ادارہ مکمل طور پر ختم ہو گیا۔ پہلے اموی حکمران معاویہ ابن ابی سفیان نے خلافت کو ملوکیت (بادشاہت) میں تبدیل کرنے میں اہم کردار ادا کیا۔ اس نے اپنے بیٹے یزید کو اپنا جانشین نامزد کیا۔ اس طرز عمل نے جسمانی سیاست میں بعض غیر اسلامی، آمرانہ اور مطلق العنان رجحانات کو جنم دیا۔ نتیجتاً اسلام کے اولین اصول جیسے امر بالمعروف اور نہی عن المنکر (برائی سے روکنا) بالکل ساقط ہو گئے۔

اسلام سے پہلے کی غلط اور قبیح روایات کو زندہ کرنے کے لیے ایک ظالم غاصب یزید تھا جسے حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم نے طویل جدوجہد کے بعد دفن کر دیا۔ وہ کھلم کھلا اسلام کے بتائے ہوئے اعمال اور نہ کرنے کو بھی نظر انداز کر رہا تھا۔ امام حسین (ع) اور ان کے ساتھیوں کے ایک چھوٹے سے گروہ کے علاوہ یزید کا مقابلہ کرنے والا کوئی نہیں تھا۔ چنانچہ امام حسین نے یزید کی بیعت کرنے سے انکار کردیا جس کا نتیجہ بالآخر سانحہ کربلا کی صورت میں نکلا۔اموی خاندان کی حکومت کو مستحکم کرنے کے لیے یزید ابن معاویہ نے بھی بنو کو بدنام کرنے کے بعد اسلام کی مذمت شروع کردی۔

اموی خاندان کی حکمرانی کو مستحکم کرنے کے لیے یزید ابن معاویہ نے بھی نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے قبیلہ بنو ہاشم کو بدنام کرنے کے بعد اسلام کی مذمت شروع کردی۔ ’’نہ تو کوئی رسول آیا ہے اور نہ ہی کوئی وحی نازل ہوئی ہے۔ یہ (اسلام) بنو ہاشم کی طرف سے اقتدار پر قبضہ کرنے کے لیے ایک چالاک چال کے سوا کچھ نہیں ہے”، اس نے کہا۔ چنانچہ اس نے حملہ کیا اور اسلام اور اس کے بانی سے وابستہ کچھ بنیادی علامتوں کو تباہ کرنے کی کوشش کی۔ سب سے پہلے، اس نے 61 ہجری کی جنگ کربلا میں نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی اولاد کو بے دردی سے ذبح کیا، دوسرے، اس نے حرہ کی جنگ میں ہزاروں صحابہ (صحابہ کرام) کو قتل کرنے کے علاوہ مدینہ (پیغمبر کا شہر) کو تباہ کیا۔ 63 ہجری میں بعد میں، اس نے مکہ کے محاصرے کے دوران کعبہ (اسلام کا سب سے مقدس مقام) کو بھی آگ لگا کر نقصان پہنچایا۔

کربلا کی جنگ کا ایک اور پہلو بھی ہے جس کا تعلق بنیادی طور پر اس سے ہے جسے عام طور پر سیاسی اسلام کہا جاتا ہے۔ امام حسین کے یزید ابن معاویہ کی بیعت سے انکار کی ایک بنیادی وجہ بعد میں مسلمانوں کے خلیفہ کے طور پر ان کی بلاجواز اور بے قاعدہ تقرری تھی۔ یہ تقرری اس سے قبل اموی خلیفہ معاویہ ابن ابو سفیان اور امام حسین کے بڑے بھائی امام حسن کے درمیان طے پانے والے امن معاہدے کی سراسر خلاف ورزی کرتے ہوئے کی گئی تھی جو سابق کے حق میں دستبردار ہو گئے تھے۔ اس معاہدے کے تحت معاویہ کو اپنے دور حکومت میں اپنا جانشین نامزد نہیں کرنا تھا، اس طرح مسلم کمیونٹی کو اپنا اگلا امیر (سربراہ مملکت) منتخب کرنے کی اجازت مل جاتی تھی۔ تاہم، معاویہ نے من مانی طور پر اپنے فاسق بیٹے یزید کو اپنا جانشین نامزد کیا جو اسلامی احکام کی خلاف ورزی کرنے والا تھا۔ لہٰذا، یزید کی آمرانہ حکومت کے خلاف بغاوت کرتے ہوئے، امام حسین نے بظاہر مسلم سیاست میں بعض جمہوری روایات کو برقرار رکھنے کی کوشش کی۔

امام حسین (ع) کو پیغمبر اکرم (ص) نے "جنت کا شہزادہ” قرار دیا تھا۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا ایک فرمان بھی ہے کہ ’’حسین مجھ سے ہے اور میں حسین سے ہوں‘‘۔ لیکن یزید ایک فاسق، فاسق اور فاسق انسان تھا۔ یہی وجہ ہے کہ امام حسین علیہ السلام نے یزید کی بیعت کرنے سے صرف یہ کہہ کر انکار کر دیا تھا کہ "مجھ جیسا شخص تم جیسے شخص کی بیعت کیسے کر سکتا ہے؟” پیغمبر اسلام (ص) کے اس فرمان کے مطابق کہ "ظالم حکمران کے سامنے سچ بولنا بہترین جہاد ہے”، امام حسین (ع) نے کربلا کی جنگ میں یزید کا مقابلہ کرنے کا فیصلہ کیا۔ یہ جنگ عالمی تاریخ کی سب سے عجیب و غریب جنگ تھی۔ امام حسین کی فوج صرف 72 سپاہیوں پر مشتمل تھی جن کی عمریں 6 ماہ سے 80 سال تک تھیں۔ انہیں 3 دن سے کھانے اور پانی سے محروم رکھا گیا تھا۔ اس کے باوجود کربلا کی جنگ میں اس چھوٹی سی فوج نے یزید کی فوج کے ایک دستے کا مقابلہ بڑی دلیری سے کیا جس میں تقریباً 30 ہزار باقاعدہ مسلح فوجی تھے۔

حسینیت ایک نظریہ ہے جو قطعی اصولوں کے ایک سیٹ پر سختی سے عمل پیرا ہونے کا مطالبہ کرتا ہے چاہے اس کے نتائج کچھ بھی ہوں اور اس کی قیمت کچھ بھی ہو۔ یہ بنیادی طور پر برقرار رکھتا ہے کہ یہ طاقت نہیں بلکہ اصول ہیں جو ہمیشہ اہمیت رکھتے ہیں اور تمام فرق پیدا کرتے ہیں۔ یہ کسی بھی حالت میں وقت کی بری طاقتوں کے سامنے سر تسلیم خم نہ کرنے کے اٹل عزم کی نمائندگی کرتا ہے۔ ایک ہی وقت میں، یہ سراسر مایوسی اور تاریکی کے عالم میں ایک رجائیت اور امید کے لیے بھی کھڑا ہے۔

کربلا کی معرکہ آرائی نے ثابت کر دیا کہ انسان افراد کو شکست دے سکتا ہے لیکن طاقت کے ذریعے نظریات کو شکست نہیں دے سکتا۔ حسینیت اس وقت دنیا بھر میں لاکھوں لوگوں کو متاثر کر رہی ہے۔ یہ نظریہ ہر سال اربعین کے موقع پر عراق میں کربلا میں امام حسین کے مزار کی طرف 30 ملین سے زیادہ لوگوں کو راغب کرتا ہے۔ یہ دنیا کا سب سے بڑا سالانہ انسانی اجتماع ہے۔ مزید برآں ہر سال یوم عاشور پر دنیا بھر میں کروڑوں لوگ شہدائے کربلا کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے اس واقعہ کی یاد مناتے ہیں۔ یہ نظریہ ایران جیسے انتشار کا شکار ملک، جس پر ایک جابر حکمران تھا، کو ایک ماڈل اور جدید مسلم فلاحی ریاست میں تبدیل کرنے میں بھی اہم کردار تھا۔

ایرانی انقلاب کے نظریہ ساز ڈاکٹر علی شریعتی نے سماجی انصاف کے مقصد کے حصول کے لیے جہاد شروع کرنے کی تاکید کی، حتیٰ کہ امام حسین علیہ السلام جیسی شہادت کو قبول کرنے کی حد تک۔ اس تناظر میں انہوں نے کہا کہ ہر دن عاشورہ ہے اور ہر جگہ کربلا ہے۔ دوسری طرف، صدیوں تک غاصب اموی اور عباسی حکومتوں کا سرکاری نظریہ رہنے کے بعد، یزیدیت عصری دنیا میں کئی غیر ریاستی عناصر پر منتج ہوئی ہے۔ چنانچہ جنگ کربلا سے جڑی بربریت اور بربریت کو زندہ کرتے ہوئے اب وہ اسلام کے نام پر مسلمانوں کا سر قلم کر رہے ہیں۔

اس وقت پوری امت مسلمہ کو تاریکی اور مایوسی نے اپنی لپیٹ میں لے رکھا ہے۔ دنیا میں مسلمانوں کے جذبات اور حقوق کی کوئی پروا نہیں۔ افغانستان اور عراق میں دہشت گردی کے خلاف جنگ کے نام پر ان کا خون پانی کی طرح بہایا گیا ہے۔ خونریز خانہ جنگی نے شام کو ٹکڑے ٹکڑے کر دیا ہے۔ القاعدہ، داعش، ٹی ٹی پی وغیرہ جیسی مختلف دہشت گرد تنظیموں کے متعدد غیر ریاستی عناصر مسلمانوں کو ذبح کر رہے ہیں۔

میانمار کی حکومت کی جانب سے بے وطن اور بے وطن برمی روہنگیا مسلمانوں کی ’نسلی تطہیر‘ بلا روک ٹوک جاری ہے۔ پرتشدد فرقہ وارانہ اور نسلی فسادات نے بھی پاکستان کو ہلا کر رکھ دیا ہے۔ ایران کو مغرب کی طرف سے من مانی طور پر عائد کی گئی بلاجواز اور سخت پابندیوں کا سامنا ہے۔ کشمیری عوام ایک عرصے سے ان کے بنیادی حق خودارادیت سے محروم ہیں۔ فلسطینیوں کو اس ریاست سے بھی انکار کیا جا رہا ہے جس کا ان سے مختلف امن معاہدوں کے تحت وعدہ کیا گیا تھا۔ قابض افواج کے ہاتھوں کشمیریوں اور فلسطینیوں کو بے دردی سے قتل کیا جا رہا ہے۔

مسلم امہ کو درپیش موجودہ مشکلات پر قابو پانے کے لیے صبر، عزم اور قوتِ کردار کا مظاہرہ کرنے کی اشد ضرورت ہے جو صرف حسینیت کی پہچان رہی ہے۔ یہ نظریہ محض ظلم اور جبر کے خلاف ایک دلیرانہ مزاحمت کی نمائندگی کرتا ہے۔ اس لیے یہ نظریہ کشمیر سے لے کر فلسطین اور دیگر جگہوں پر دنیا کے مظلوم اور دبے ہوئے لوگوں کو متاثر کرتا رہے گا۔بشکریہ شفقنا نیوز

یہ بھی دیکھیں

کیا پیوٹن کا ‘ فوج کو جزوی طور پر متحرک کرنے کا عمل’ یوکرین میں روسی مقاصد کو حاصل کر سکتاہے؟: شفقنا بین الاقوامی

روس کے صدر ولادیمیر پیوٹن نے 300,000 ریزرو کو حکم دیا ہے کہ وہ ایک …