منگل , 27 ستمبر 2022

فلسطینی اتھارٹی اور اسرائیلی دشمن کے درمیان خفیہ ملاقاتیں

مقبوضہ بیت المقدس:ایسا لگتا ہے کہ مغربی کنارے میں سکیورٹی کی صورتحال قابو سے باہر ہونے لگی ہے، یہی وجہ ہے کہ "اسرائیل” فلسطینی اتھارٹی کے رہ نماؤں کے ساتھ ملاقاتیں کرنے کے لیے بے تاب ہو گیا۔

عبرانی "کان” نیٹ ورک نے انکشاف کیا ہے کہ فلسطینی جنرل انٹیلی جنس کے ڈائریکٹر ماجد فرج اور لبریشن آرگنائزیشن کےسیکرٹری حسین الشیخ نے اسرائیلی حکام کے ساتھ خفیہ ملاقاتیں کی ہیں۔

’کان‘ کے مطابق خفیہ میٹنگ کا مقصد فلسطینی اتھارٹی کی سکیورٹی سروسز کے کردار کو مضبوط بنانا، مزاحمت کا مقابلہ کرنا اور یہودیوں کی تعطیلات کے دوران قابض رہاست میں کسی بھی قسم کی کشیدگی کو روکنا تھا۔

عبرانی اخبار "ہارٹز” نے انکشاف کیا ہے کہ قابض مزاحمت کی طاقت اور اتھارٹی کے آلات کی کمزوری کی روشنی میں فلسطینی اتھارٹی کے خاتمے کو روکنے کی کوشش میں اپنی سرگرمیاں محدود کرنے پر غور کر رہا ہے۔

اخبار نے نشاندہی کی کہ یہ قدم واشنگٹن کو اس بارے میں بریفنگ کے بعد اور تناؤ کو کم کرنے اور اتھارٹی کو مزید رقم دینے کی امریکی کوششوں کے بعد اٹھایا گیا ہے۔

کچھ اسرائیلی حکام فلسطینی اتھارٹی کے ساتھ سکیورٹی کوآرڈینیشن کو مضبوط بنانے اور غیر ضروری "پرتشدد” اقدامات سے گریز کرنے کی تجویز کرتے ہیں، جسے وہ اتھارٹی اور اس کی سرگرمیوں کو مضبوط کرنے کے لیے سب سے اہم قدم کے طور پر دیکھتے ہیں۔

اسرائیل نے مسلح گروپوں کے خلاف اپنی طاقت کو مضبوط بنانے اور بہتر تربیت یافتہ اورہتھیاروں سے لیس ایک خصوصی فلسطینی فورس بنانے کے خیال کے ساتھ اتھارٹی کے آلات کو اضافی ہتھیاروں اور گولہ بارود کی منتقلی کے اجازت نامے کو مسترد نہیں کیا۔

سینیر اسرائیلی سکیورٹی حکام کا کہنا ہے کہ اسرائیل کے پاس دو آپشنز کے علاوہ کوئی متبادل نہیں ہے۔ فلسطینی اتھارٹی کو شمالی مغربی کنارے کے شہروں میں سکیورٹی کی ذمہ داری دوبارہ حاصل کرنے میں مدد کرنا، یا اتھارٹی کے خاتمے کو اس طرح سے دیکھنا جو "اسرائیل” کو مغربی کنارے میں داخل ہونے پر مجبور کر سکتا ہے تاکہ پیدا ہونے والے خلا کو پُر کیا جا سکے۔

یہ بھی دیکھیں

جنگ بندی کی خلاف ورزی؛یمن پر سعودی اتحاد کی جارحیت بدستور جاری

صنعا:یمن کے مختلف علاقوں پر سعودی اتحاد کی جارحیت کا سلسلہ بدستور جاری ہے جبکہ …