ہفتہ , 1 اکتوبر 2022

کیا پیوٹن یمن پر سعودیہ متحدہ عرب امارات تنازعے سے فائدہ اٹھا سکتے ہیں؟

جب اس سال اگست میں متحدہ عرب امارات کے حمایت یافتہ "علیحدگی پسندوں” کے یمن کے دارالحکومت عدن کو سعودی-یو اے ای کی حمایت یافتہ سرکاری افواج کے ہاتھوں سے چھیننے کی خبریں چھڑ گئیں تو یمن کا معاملہ اور بھی پیچیدہ ہونا شروع ہو گیا۔

کم از کم کاغذ پر علیحدگی پسندوں کو متحدہ عرب امارات اور سعودی عرب دونوں کی حمایت حاصل تھی، حالانکہ "بغاوت” جیسا کہ اسے کہا جاتا تھا، متحدہ عرب امارات کے لیے نقصان دہ کام سمجھا جاتا تھا، جس نے جنوبی عبوری کونسل کی ایک علیحدہ جنوبی بیلٹ بنانے کے مقصد کی حمایت کی۔ایک ایسی بیلٹ جو نہ صرف شمال میں موجود حوثیوں سے آزاد ہو ، بلکہ جو موجودہ سعودی حمایت یافتہ ہادی حکومت سے خودمختاری کا مطالبہ بھی رکھتی ہو۔

جب "بغاوت” ہوئی، تو یہ نہ صرف سعودیوں کے لیے ایک اہم نکتہ تھا جنہوں نے محسوس کیا کہ یمن میں ان کے شراکت دار ہمیشہ ان کو ساتھ ایک صفحے پر نہیں ہیں، بلکہ یہ بھی کہ متحدہ عرب اماراتـ سعودی معاہدہ اتنا مضبوط نہیں ہے جتنا کہ بہت سے لوگوں کا خیال ہے۔

درحقیقت، جب کہ ٹرمپ کے حواریوں نے خوف کے عالم میں دیکھا ہوگا کہ ان دونوں علاقائی بڑی طاقتوں نے مؤثر طریقے سے اپنے معاہدے کو توڑ دیا، تو اس سے روس کے ولادیمیر پیوٹن کی آنکھوںمیں خوشی کے آنسو آ گئے۔
خطے میں روسی رہنما کے لیے اب اس تقسیم اور افراتفری کا فائدہ اٹھانے اور نئے قوانین، نئے شراکت داروں اور نئے معاہدوں کے ساتھ صفائی کے مواقع بہت زیادہ ہیں کیونکہ ایران کے خلاف سعودی -متحدہ عرب امارات کا محاذ ٹوٹتا دکھائی دے رہا ہے۔

بہت سے لوگ یہ استدلال کر سکتے ہیں کہ اکتوبر کے وسط میں پیوٹن کا خطے کا دورہ اسی متعلق تھا۔ اصولی طور پر، یہ ریاض میں سعودیوں کے لیےدورہ کرنااور روس کو استحکام کے لیے ایک علاقائی پارٹنر کے طور پر مزید فروغ دینا ہے، جس میں ان لوگوں کے لیے کوئی خوشگوار پہلو نہیں ہے جو اندازہ لگاتے ہیں کہ کیا وہ(پیوٹن) جادوئی سوال پوچھے گا کہ: "کیا S-400 میزائل سسٹم نے ایران سے کیے جانے والے حملے کو بلاک نہیں کیا؟

ہمیں ارجنٹینا میں جی 20 سربراہی اجلاس میں ایم بی ایس اور پیوٹن کی گرم جوش باڈی لینگویج کو اچھی طرح یاد ہے، خاشقجی کے معاملے کے اسکینڈل کے بعد جس نے سعودی ولی عہد کو نئے شراکت داروں کی تلاش پر مجبور کیا، جب ٹرمپ نے یہ بات بالکل واضح کر دی کہ وہ اس طرح کا دوست نہیں ہے جسکی ریاض کو امید ہے کہ اسے ایساہونا چاہیے۔

خشوگی کے معاملے نے MBS کو بہتر دفاعی خریداری کے سودوں کے لیے چین اور روس کی طرف دیکھنے پر آمادہ کیا اور پوٹن کی طرف سے S-400 کی پیشکش اس کی ایک واضح یاد دہانی ہے۔

رسمی یا سرکاری طور پر ریاض میں مذاکرات کا شیڈول متنازعہ روسی میزائل ڈیفنس سسٹم کے بارے میں نہیں ہو سکتا لیکن یہ ہمیشہ موجود رہے گا۔ اصل موضوع اگرچہ یمن ہوگا۔

روس کا متحدہ عرب امارات سے منسلک جنوبی یمن میں باغیوں کے ساتھ خصوصی تعلق ہے۔ درحقیقت، STC کی طرف اس کی مفاہمت کی پیش رفت کا مقصد UAE کے ساتھ ماسکو کے تعلقات کو تقویت دینا ہے تاکہ پوٹن کو اس کے جنوبی ساحلی پٹی کے ساتھ ملٹری بیس بنانے کے قابل بنایا جا سکے۔

ماسکو کی ایس ٹی سی کے ساتھ قربت جس کی وجہ سے جنوبی یمن میں نجی ملٹری کمپنیاں اس گروپ کی حمایت کر رہی ہیں، یہاں تک کہ ایس ٹی سی ،پیوٹن کے لیے اقوام متحدہ کی ثالثی میں ہونے والے امن مذاکرات کی حمایت کرنے کی راہ ہموار کر سکتی ہے، جس سے وہ متحدہ عرب امارات کے قرضوں میں ڈوب جائے گا جبکہ اسےریاض سے بہت زیادہ سرمایہ بھی ملے گا ۔

فی الحال تو رجحان یہ لگ رہا ہے کہ اپنے دشمنوں کی طرف سے پیش کردہ امن معاہدے کو تسلیم نہ کریں۔ حوثیوں نے سعودیوں کو ایسی پیشکش کی ہے۔ ایرانیوں نے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے دوران امریکہ کو جوہری ہتھیاروں سے متعلق ایک شاندار پیشکش کی۔ انہوں نے ٹرمپ کے ساتھ غیر رسمی ملاقات کی پیشکش کو بھی ٹھکرا دیا۔ اور سعودیوں نے ابھی ایرانیوں تک بات چیت کی پیشکش کی ہے۔بہرہ کر د ینے والی خاموشی ہے۔

اس میں پیوٹن کہاں فٹ بیٹھتے ہیں؟ ابو ظہبی کو قریب رکھنا بلکہ ریاض کو اس سے بھی قریب رکھنا ایک متوازن عمل ہوگا، لیکن پیوٹن کا سفر یہی ہے۔ اسے STC کی مکمل حمایت کرنے کی ضرورت نہیں ہے، لیکن صرف یہ تجویز ہے کہ یہ آپشن ہمیشہ میز پر رہے گا تاکہ سعودیوں کو کافی پریشان کیا جا سکے، تاکہ اسے ایک سپر پاور لیڈر بنایا جا سکے کہ انہیں دشمن کے طور پر دیکھنے کے بجائے قریب ہونا چاہیے۔

یہ نازک چیز ہے، لیکن بالکل اسی طرح جس طرح سے روسی مشرق وسطیٰ میں کام کرنا پسند کرتے ہیں، دکان کے دروازے کو ہمیشہ کوئی سے بھی نئے گاہکوں کے لیے کھلا رکھتے ہیں۔

یقیناً اس دورے کا وقت صرف اس لیے نازک نہیں ہے کہ یمن کی صورت حال بگڑتی جا رہی ہے اور سعودی اپنے ہی گھر میں بنائے گئے ویتنام میں گھبراہٹ اور پھنسے ہوئے دکھائی دے رہے ہیں – جو حال ہی میں اس وقت سے ایک نئی اندرونی کشمکش میں ڈوب گیا ہے جب حوثیوں نے سعودی فوجیوں کو ایک جرات مندانہ کراس بارڈر حملے میں گرفتار کر لیا۔ –

تجربہ کار تجزیہ کار یہ بتانا پسند کرتے ہیں کہ گزشتہ حکومت میں ٹرمپ اور ایم بی ایس کے درمیان سہولت کی یہ شادی، تعریف کے مطابق، طلاق کی عدالتوں کی طرف نہیں جا سکتی تھی کیونکہ دونوں پارٹنرزیہ سوچ بھی نہیں سکتے تھےکہ ایک دوسرے کے بغیر باہر کتنی سردی ہوگی۔

سی بی ایس کا حالیہ انٹرویو، جو کہ اسٹیج سے منظم دکھائی دیتا ہے، ایک امریکی PR فرم کا مائیکرو مینیج کرنے کا کام کرتا ہے اور یہ بات آنے والے برسوں میں اچھی طرح سے ظاہر ہو سکتی ہے کہ اس میں ٹرمپ کا ہاتھ تھا۔
لیکن کوئی بات نہیں۔ سابقہ صدر کی غلط اور غلط مڈل ایسٹ پالیسی نے یمن کی ناکامی کو سعودیوں اور ان کے اماراتی پڑوسیوں دونوں کے منہ پر دے مارا ۔ اور یہاں تک کہ ایران کا معاہدہ، جسے محض اوبامہ کےسابقہ دور میں ہونے والے معاہدے ساتھ گڑبڑ کرنے کے لیے سبوتاژ کیا، سعودیوں کے لیے مہنگا ثابت ہو رہا ہے اور انہیں تہران سے فون اٹھانے پر مجبور کر رہا ہے۔

ایم بی ایس نے پاکستانی حکام کے زریعے ایران تک پہنچنے میں پہل کی اور اسے ایسا کرنے کے لیے اکسانے میں دیگر کسی بھی چیز سے زیادہ خود امریکی صدور کی غلط پالیسیوں کا ہاتھ رہا ہے۔ اب اس نئی صورت حال میں روس کے لیے مشرق وسطیٰ میں بڑا کردار ادا کرنے کے مواقع میں وسعت آ گئی ہے جو آنے والے دنوں میں افریقہ کی طرح پورے ایشیا بالخصوص مشرق وسطیٰ میں امریکی اثرورسوخ میں مزید کمی کا مضبوط محرک ثابت ہوگا۔بشکریہ شفقنا نیوز

یہ بھی دیکھیں

کیا پیوٹن کا ‘ فوج کو جزوی طور پر متحرک کرنے کا عمل’ یوکرین میں روسی مقاصد کو حاصل کر سکتاہے؟: شفقنا بین الاقوامی

روس کے صدر ولادیمیر پیوٹن نے 300,000 ریزرو کو حکم دیا ہے کہ وہ ایک …