بدھ , 28 ستمبر 2022

موسیقی سننا زیادہ کھانے سے گریز کرنے میں مددگار قرار

لیسٹر: لوگ اکثر جب اداسی یا ذہنی دباؤ محسوس کر رہے ہوتے ہیں تو کھانے کی جانب رجوع کرتے ہیں جس کی وجہ وہ بِسیار خوری(ضرورت سے زیادہ کھانا کھانا) کرنے لگ جاتے ہیں۔ایک تحقیق میں معلوم ہوا ہے کہ لوگ جب ذہنی دباؤ محسوس کریں تو کچھ کھانے کے بجائے اپنے پسندیدہ گانے سنیں تاکہ دباؤ سے راحت حاصل کرسکیں۔

تحقیق میں محققین نے یہ جاننے کے لیے کہ منفی جذبات سے نمٹنے کے لیے کھانا اور موسیقی کتنی مدد کرسکتی ہے، تجزیہ کیا کہ مخصوص قسم کی موسیقی سنتے ہوئے خواتین کتنا کھاتی ہیں۔

تحقیق میں خواتین کو ماضی کا کوئی واقعہ یاد دلا کر اداس کیا گیا۔بعد ازاں غصے یا اداسی کو دور کرنے کے لیے جن خواتین نے موسیقی سنی انہوں نے موسیقی نہ سننے والی خواتین کی نسبت آدھی مقدار میں اسنیکس(چپس، چاکلیٹ، پاپ کورن وغیرہ) کھائے۔

سنی جانے والی موسیقی میں ایمی وائن ہاؤس کا بیک ٹو بیک، ایمینیم کا موکنگ برڈ اور لنکن پارک کا ان دی اینڈ شامل تھا۔وہ خواتین جن کو اداس کیا گیا تھا انہوں نے موسیقی سننے کے بعد 35 فی صد کے قریب کھایا۔

محققین نے بتایا کہ ان کی تحقیق کے نتائج میں یہ بات سامنے آتی ہے کہ لوگ ممکنہ طور اپنے پسندیدہ گانے سن کر غصے یا اداسی میں بِسیار خوری سے گریز کرسکتے ہیں۔

برطانیہ کے شہر لیسٹر کی ڈی مونٹفورٹ یونیورسٹی کی ایک ماہر ڈاکٹر ہیلین کُولتھراڈ کا کہنا تھا کہ اگر آپ ذہنی دباؤ محسوس کر رہے ہوں اور اس کے نتیجے میں آپ بے شمار غیر صحت مند کھانا کھا سکتےہوں تو اپنے ہیڈ فونز لگائیں اور کچھ اچھا میوزک سنیں۔انہوں نے مزید کہا کہ یہ طریقہ کار لوگوں کو وزن کم کرنے میں بھی مدد دے سکتا ہے۔

یہ بھی دیکھیں

دیر تک جاگنا ٹائپ 2 ذیابیطس کا سبب بن سکتا ہے، تحقیق

نیو جرسی: ایک نئی تحقیق میں معلوم ہوا ہے کہ رات کو دیر تک جاگنا …