بدھ , 30 نومبر 2022

ٹینکروں میں مضر صحت پانی کی فروخت پر واٹر بورڈ کا آئی جی سندھ کو خط

کراچی میں مضر صحت پانی فروخت کرنیوالی واٹر ٹینکر مافیا کے خلاف کارروائی کیلئے سی ای او واٹر بورڈ نے آئی جی سندھ کو خط لکھ دیا۔سی ای او واٹر بورڈ انجینئر سید صلاح الدین احمد نے آئی جی سندھ غلام نبی میمن سے مضر صحت پانی فروخت کرنے والی مافیا کے خلاف فوری کارروائی کا مطالبہ کیا ہے۔

سی ای او واٹر بورڈ کے مطابق مضر صحت پانی ساکران، ٹھٹھہ اور گھارو سے ٹینکروں میں لاکر شہر میں فروخت کیا جارہا ہے، ٹینکرز مافیا حب کے علاقے ساکران میں غیر قانونی ہائیڈرینٹس کے ذریعے جوہڑوں سے مضر صحت پانی نکال رہا ہے۔

انہوں نے کہا مضر صحت پانی کے ٹینکرز منگھوپیر، موچکو اور معمار تھانے کی حدود سے شہر میں داخل ہوتے ہیں، دھابیجی اور گھارو سے بھی آلودہ پانی سپلائی کیا جارہا ہے۔

انجینئر صلاح الدین کا کہنا ہے کہ انتہائی مضر صحت پانی کے ٹینکرز شہر کی سڑکوں پر باآسانی فروخت ہو رہے ہیں جس سے بزرگ شہری سب سے زیادہ متاثر ہوسکتے ہیں۔

انہوں نے کہا مضر صحت پانی مختلف بیماریوں کا سبب بن رہا ہے جس سے ڈینگی، نیگلیریا اور کووڈ 19 کیخلاف کوششوں کو بھی سخت نقصان پہنچ رہا ہے۔سی ای او واٹر بورڈ نے آئی جی سے مطالبہ کیا کہ ٹینکر مافیا کو لگام ڈالنے کیلئے ہر ممکن کوشش کی جائے۔

یہ بھی دیکھیں

چین میں کورونا جیسا ایک اور وائرس دریافت

ینان: سائنس دانوں کا کہنا ہے کہ جنوبی چین میں موجود چمگادڑوں میں کووڈ کے …